ہے کیسا اندھیرا یہ کیا ہو گیا ہے
ہے کس کا جنازہ قیامت بپا ہے
قیامت بپا ہے بھلا کون قیدی ہے
کیا ڈھونڈتا ہے کہاں پر بنائے لحد سوچتا ہے
قیامت بپا ہے قیامت بپا ہے
ضعیفی میں عابد کی بدلی جوانی سکینہ کی تُربت بناتے بناتے

کئی بار مر کے وہ زندہ ہوا ہے
بہن کو زمیں پر سُلاتے سُلاتے
ضعیفی میں عابد کی ۔۔۔

کہیں آنکھ برسی کہیں دل چھِدا ہے
کہیں ہاتھ لرزے کہیں دم رُکا ہے
بہتر جنازوں سے گُزرا ہے عابد
بہن کا جنازہ اُٹھاتے اُٹھاتے
ضعیفی میں عابد کی ۔۔۔

ہوئے کان زخمی تماچے لگے تھے
سکینہ کی آنکھوں میں آنسُو بھرے تھے
سُوئے نہر تکتی تھی حسرت سے بچی
جلا اپنا دامن بُجھاتے بُجھاتے
ضعیفی میں عابد کی ۔۔۔

لحد کے لیے مل گیا قید خانہ
رہا خود نہ ہو پائی بالی سکینہ
مگر وہ اسیروں کو قیدِ ستم سے
رہائی دلا کر گئی جاتے جاتے
ضعیفی میں عابد کی ۔۔۔

یہ زہرا کی پوتی ہے غازی کی پیاری
بہت لاڈلی ہے یہ اپنے پدر کی
قیامت بپا ہے

یہ ہر بار میں کیا قیامت ہوئی ہے
سکینہ پھُوپھی سے یہ کیا پُوچھتی ہے
کہیں مر ہی جائے نہ زینب خدایا
کنیزی کا مطلب بتاتے بتاتے
ضعیفی میں عابد کی ۔۔۔

ہے سکتے میں بانو قیامت ہے کیسی
پدر سے وہ باتیں ابھی کر رہی تھی
مگر اب کبھی بھی نہ بولے گی بچی
یہ ماں کو یقیں آئے گا آتے آتے
ضعیفی میں عابد کی ۔۔۔

سکینہ کی جانب سے اے میرے مولا
سدا نامِ اصغر پہ حسرت ہے میری
گُزر جائے اکبر کی یہ عمر ساری
سبیلوں سے پانی پلاتے پلاتے
ضعیفی میں عابد کی ۔۔۔


hai kaisa andhera ya kya hogaya hai
hai kiska janaza qayamat bapa hai
qayamat bapa hai bhala kaun qaidi hai
kya dhoondta hai kahan par banaye lehad sochta hai
qayamat bapa hai qayamat bapa hai
zaeefi may abid ki badli jawani sakina ki turbat banate banate

kayi baar mar ke wo zinda hua hai
behen ko zameen par sulaate sulaate
zaeefi may abid ki....

kahin aankh barsi kahin dil chida hai
kahin haath larze kahin dam ruka hai
bahattar janazo se guzra hai abid
behen ka janaza uthaate uthaate
zaeefi may abid ki....

huwe kaan zakhmi tamache lagay thay
sakina ki aankhon my aansoo bhare thay
suye nehr takti thi hasrat se bachi
jala apna daaman bujhate bujhate
zaeefi may abid ki....

lehad ke liye mil gaya qaid khana
reha khud na ho paayi bali sakina
magar wo aseero ko qaide sitam se
rehai dilakar gayi jaate jaate
zaeefi may abid ki....

ye zahra ki poti hai gazi ki pyari
bahot laadli hai ye apne padar ki
qayamat bapa hai

ye har baar may kya qayamat hui hai
sakina phuphi se ye kya poochti hai
kahi mar hi jaaye na zainab khudaya
kaneezi ka matlab bataate bataate
zaeefi may abid ki....

hai sakhte may bano qayamat hai kaisi
padar se wo baatein abhi kar rahi thi
magar ab kabhi bhi na bolegi bachi
ye maa ko yakeen aayega aate aate
zaeefi may abid ki....

sakina ki jaanib se ay mere maula
sada naame asgar pe hasrat hai meri
guzar jaaye akbar ki ye umr saari
sabeelo se pani pilaate pilaate
zaeefi may abid ki....
Noha - Sakina Ki Turbat
Shayar: Saqlain Akbar
Nohaqan: Shahid Baltistani
Download Mp3
Listen Online