ناتواں اور قید میں،ہائے بیمار ہائے ہائے سجاد
سجاد پہ وہ کیسی قیامت کی گھڑی تھی
جب ثانیِ زہرا سرِ دربار کھڑی تھی
سجاد پہ وہ کیسی ۔۔۔۔۔

ہاتھوں پہ تھا معصوم سکینہ کا جنازہ
آنکھوں میں لگی خون کے اشکوں کی جھڑی تھی
سجاد پہ وہ کیسی ۔۔۔۔۔
جب ثانیِ زہرا سرِ ۔۔۔

سر کو وہ جھُکائے ہوئے ہر موڑ سے گزرے
تپتا ہوا صحرا تھا اور دھوپ کڑی تھی
سجاد پہ وہ کیسی ۔۔۔۔۔
جب ثانیِ زہرا سرِ ۔۔۔

کانٹوں کو رُلاتی تھی تیری آبلہ پائی
زنجیر بھی روتی تھی جو پائوں میں پڑی تھی
سجاد پہ وہ کیسی ۔۔۔۔۔
جب ثانیِ زہرا سرِ ۔۔۔

زنداں کے اندھیرے میں تنہا تھی سکینہ
آنکھوں میں اُس کے کیسی اشکوں کی جھڑی تھی
سجاد پہ وہ کیسی ۔۔۔۔۔
جب ثانیِ زہرا سرِ ۔۔۔

شاہ نجم نے بند کر دیئے اس پہ سُخن تمام
عزت بھی بڑی تھی تو مصیبت بھی بڑی تھی
سجاد پہ وہ کیسی ۔۔۔۔۔
جب ثانیِ زہرا سرِ ۔۔۔


naatawan aur qaid may, haay beemar haay haay sajjad
sajjad pe wo kaisi qayamat ki ghadi thi
jab sani-e-zehra sare darbaar khadi thi
sajjad pe wo kaisi ....

haathon pe tha masoom sakina ka janaza
aankhon may lagi khoon ke ashkon ki ghadi thi
sajjad pe wo kaisi ....
jab sani-e-zehra sare....

sar ko wo jhukaaye huwe har mod se guzre
tapta huwa sehra tha aur dhoop kadi thi
sajjad pe wo kaisi ....
jab sani-e-zehra sare....

kaanton ko rulaati thi teri aabla paayi
zanjeer bhi roti thi jo paaon may padi thi
sajjad pe wo kaisi ....
jab sani-e-zehra sare....

zindaan ke andhere may tanha thi sakina
aankhon may uske kaisi ashkon ki jhadi thi
sajjad pe wo kaisi ....
jab sani-e-zehra sare....

shah najm ne band kardiye is pe sukhan tamaam
izzat bhi badi thi to musibat bhi badi thi
sajjad pe wo kaisi ....
jab sani-e-zehra sare....
Noha - Sajjad Pe Wo Kaisi
Shayar: Najm
Nohaqan: Hasan Sadiq
Download Mp3
Listen Online