شبیر نے میداں کا نقشہِ جگر دیکھا
سب خون کے پیاسے تھے مولا نے جدھر دیکھا

عباس کی دریا پر نظریں نہ ٹھہرتی تھیں
جب بھر لیا مشکیزہ مُڑ کر نہ اُدھر دیکھا
سب خون کے پیاسے ۔۔۔۔۔

دل تھام لیا اپنا اور اشک نکل آئے
سجاد نے بابا کا نیزے پہ جو سر دیکھا
سب خون کے پیاسے ۔۔۔۔۔

سر پیٹ لیا اپنا اک حشر کیا برپا
زندان میں سکینہ نے بابا کا جو سر دیکھا
سب خون کے پیاسے ۔۔۔۔۔

میدان سے علی اکبر واپس ہوئے خیمے میں
ماں نے جو دُعا کی تھی یہ اُس کا اثر دیکھا
سب خون کے پیاسے ۔۔۔۔۔

حلقوم پہ ظالم کا جب تیرِ ستم آیا
بے شیر نے بابا کو بس ایک نظر دیکھا
سب خون کے پیاسے ۔۔۔۔۔

نظروں میں مجاہد تھی تصویر وہ فرقت کی
شبیر نے صغریٰ کو جب وقتِ سفر دیکھا
سب خون کے پیاسے ۔۔۔۔۔


shabbir ne maidan ka naqshahe jigar dekha
sab khoon ke pyase thay maula ne jidhar dekha

abbas ki darya par nazrein na teher ti thi
jab bhar liya mashkeeza mudkar na udhar dekha
sab khoon ke pyase....

dil thaam liya apna aur ashk nikal aaye
sajjad ne baba ka naize pa jo sar dekha
sab khoon ke pyase....

sar peet liya apna ek hashr kiya barpa
zindan may sakina ne baba ka jo sar dekha
sab khoon ke pyase....

maidan se ali akbar wapas hue qaimay may
maa ne jo dua ki thi ye uska asar dekha
sab khoon ke pyase....

hulqoom pa zaalim ka jab teere sitam aaya
baysheer ne baba ko bas ek nazar dekha
sab khoon ke pyase....

nazron may mujahid thi tasveer wo furkhat ki
shabbir ne sughra ko jab waqte safar dekha
sab khoon ke pyase....
Noha - Sab Khoon Ke Pyase
Shayar: Mujahid
Nohaqan: Askar Ali Khan
Download Mp3
Listen Online