روضے پہ مصطفیٰ کے اُداسی سی چھائی ہے
کنبے کو کھو کہ زینبِ ناشاد آئی ہے
رو کر پکاری نانا کے فریاد لائی ہوں
میں چھوڑ کر حسین کو جنگل میں آئی ہوں

نانا ہمارے گھر کا سب اسباب لُٹ گیا
نانا ہمارے سر پہ نہ باقی رہی ردا
نانا ہزار طرح جفا کی لعینوں نے
خیمے میں ہائے آگ لگا دی لعینوں نے
روضے ۔۔۔۔۔

نانا عجیب سانحے ہم پر گُزر گئے
رنج و الم نے گھیر لیا ہم جدھر گئے
نانا خدا کے گھر میں نہ ہم کو اماں ملی
بھائی نے شہر چھوڑ کے جنگل کی راہ لی
روضے ۔۔۔۔۔

نانا شہید ہو گئے بھائی کے جانثار
اک اک کر کے مر گئے اصحابِ ذی وقار
نانا بلا کے بن میں قیامت کا رن پڑا
بھائی سے بھائی باپ سے بیٹا بچھڑ گیا
روضے ۔۔۔۔۔

نانا تمہاری شکل کا فرزند اک جو تھا
کھا کر سناں جگر پہ وہ مہرو بھی چل بسا
نانا شقی کے تیر سے اصغر ہوئے شہید
ایسا ہوا نہ ہو گا جہاں میں ستم شدید
روضے ۔۔۔۔۔

نانا زمینِ کرب و بلا لال ہو گئی
قاسم کی لاش گھوڑوں سے پامال ہو گئی
نانا کٹا کے شانوں کو عباس مر گئے
غربت میں بھائی جان کو بے آس کر گئے
روضے ۔۔۔۔۔

نانا ہوئیں اسیر تمہاری نواسیاں
کون و مکاں میں چھا گئی غم کی اُداسیاں
نانا حرم حسین کے بازار میں گئے
ہم سر برہنہ کوفے کے ازار میں گئے
روضے ۔۔۔۔۔

نانا تمہاری آل گئی لُٹ کے شام میں
پہنچیں علی کی بیٹیاں دربارِ عام میں
نانا اسیر صاحبِ تطہیر ہو گئے
ہم لوگ شہرِ شام میں تشیر ہو گئے
روضے ۔۔۔۔۔

نانا اسیر باراں تھے اور ایک تھی رسن
باندھے گئے تھے مثلِ گنہگارِ خستہ تن
نانا ہم اپنے حال پہ روتے تھے حال زار
نانا ہمارے حال پہ ہنستے تھے بدشُعار
روضے ۔۔۔۔۔

اک اک نام پوچھتا تھا بانیئے ستم
نانا بتاتا جاتا تھا شمرِ جفا ستم
یہ زینبِ حزیں ہے وہ کلثومِ دلفگار
اُنگلی اُٹھا اُٹھا کے دیکھاتا تھا نابِ کار
روضے ۔۔۔۔۔

نانا عجیب حال تھا ہمارا اُس گھڑی
اک بی بی پیچھے دوسری بی بی کے چھُپتی تھی
اُس وقت تھر تھری سی میرے تن میں پڑ گئی
صد ہیف ہے زمین میں زینب نہ گڑ گئی
روضے ۔۔۔۔۔

اتنے میںایک شامی نے نانا غضب کیا
سیدانی کو کنیزی میں نا نا طلب کیا
ہوتی تھیں لاکھ ذلتیں ہم دیکھتے رہے
ہنس ہنس کے تازیانِ ستم جھیلتے رہے
روضے ۔۔۔۔۔

نانا تباہ ہو کے ہم آئے ہیں شام سے
اک داغِ نو سکینہ کا لائے ہیں شام سے
اب تک ہیںنیل رسی کے شانوں کو دیکھ لو
نانا ہمارے تن پہ نشانوں کو دیکھ لو
روضے ۔۔۔۔۔

زینب جو رو کے کرتی تھی قبرِ نبی پہ بین
تھرا رہا تھا روضہِ سُلطانِ مشرقین
بس ختم کر نثار یہ غمناک داستاں
روئے ہیں اس عالم مین زمیںاور آسماں
روضے ۔۔۔۔۔


roze pe mustafa ke udaasi si chaayi hai
kunbe ko khoke zainab e nashaad aayi hai
rokar pukare nana ke faryaad laayi hoo
mai chor kar hussain ko jungle may ayi hoo

nana hamare ghar ka sab asbaab lut gaya
nana hamare sar pe na baakhi rahi rida
nana hazaar tarha jafa ki laeeno ne
khaime may haae aag lagadi laeeno ne
roze....

nana ajeeb sanae hampar guzar gaye
ranjo alam ne ghayr liya hum jidhar gaye
nana khuda ke ghar may na hamko ama mili
bhai ne shehar chod ke jungle ki raah li
roze....

nana shaheed hogae bhai ke janisaar
ek ek karke mar gaye ashaab e zewiqaar
nana bala ke bun me qayamat ka run pada
bhai se bhai baap se beta bichad gaya
roze....

nana tumhare shakl ka farzand ek jo tha
khakar sina jigar pe wo mehru bhi chal basa
nana shaqhi ke teer se asghar hue shaheed
aisa hua na hoga jahaan me sitam shadeed
roze....

nana zameen e karbobala laal hogayi
qasim ki laash ghodo  se pamaal hogayi
nana kata ke shano ko abbas margaye
ghurbath may bhai jaan ko be-aas kargaye
roze....

nana hue aseer tumhare nawasiyan
kauno makaan may chaagayi gham ki udasiyan
nana haram hussain ke bazaar may gaye
hum sar barehna koofe ke bazaar me gae
roze....

nana tumhare aal gaye lut ke sham may
pahunche ali ki betiyan darbare aam may
nana aseer sahibe tatheer hogaye
hum log shehre shaam may tasheer hogaye
roze....

nana aseer bara thay aur ek thi rasan
bandhe gaye thay misle gunagaare khastatan
nana hum apne haal pe rote thy haal zaar
nana hamare haal pe haste thy badshuaar
roze....

ek ek naam poochta tha baaniye sitam
nana batata jata tha shimre jafa sitam
ye zainabe hazeen hai wo kulsoom e dilfigaar
ungli utha utha ke dikhata tha nabeqaar
roze....

nana ajeeb haal hamara tha us ghadi
ek bibi peeche dosre bibi ke chupti thi
us waqt tharthari si mere tan me pad gayi
sad haif hai zameen may zainab na gad gayi
roze....

itne me shaami ne nana ghazab kiya
saidani ko kaneezi may nana talab kiya
hote thi laak zillatein hum dekhte rahe
has has  ke taazeyane sitam jhayllte rahe
roze....

nana tabah hoke hum aaye hai shaam se
ek daaghe nou sakina ka laye hai shaam se
ab tak hai neel rassi ke shano ko dekhlo
nana hamare tan pe nishano ko dekhlo
roze....

zainab jo roke karti thi qabre nabi pe bain
tharra raha tha rozae sultane mashraqain
bas qatm kar nisaar ye gham naak dastaan
roye hai is alam me zameen aur asmaan
roze....
Noha - Roze Pe Mustufa Ke
Shayar: Nisaar
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online