یا ابا عبداللہ،روحی وا جسمی لاکل فِدا

ہر لاشہ دیتا جاتا ہے مقتل سے یہ صدا
روحی وا جسمی لاکل فِدا،یا ابا عبداللہ

ہم نے ہے کیا آپ کی مادر سے یہ وعدہ
مجلس نہ رُکے گی کبھی ماتم نہ ُرکے گا
کٹ جائے چاہے ہاتھ یہ کٹ جائے یہ گلا
روحی وا جسمی۔۔۔

ڈرتے ہیں کہاں موت سے ہم اہلِ شہادت
ہے جان سے بڑھ کر تیرے روضے کی زیارت
کہتے ہوئے یہ قافلے جاتے ہیں کربلا
روحی وا جسمی۔۔۔

ظالم نہ بنا دے کہیں اک اور بقیہ
پھر مولا وہ ہی شام ہے اور آپ کا کنبہ
ازنِ جہاد کیجیئے مہدی کو اب عطا
روحی وا جسمی۔۔۔

ھل مِن جو شبیر نے مقتل میں صدا دی
اصحاب تڑپنے لگے تنہائی پہ شہ کی
اُٹھ اُٹھ کے دیتا جاتا تھا ہر لاشہ یہ صدا
روحی وا جسمی۔۔۔

سجاد نے بابا کی جو تُربت کو بنایا
شبیر کے سینے پہ جو اصغر کو سُلایا
لاشے سے کہہ کے دوسرا لاشہ لپٹ گیا
روحی وا جسمی۔۔۔

دربار نہ جائوں گی میںکہتی تھی یہ خواہر
روتے ہوئے شبیر کو دیکھا جو سِناں پر
لبیک کہہ کے چل پڑی دربار سیدہ
روحی وا جسمی۔۔۔

جس وقت کے زندان میں پیاسوں کے سر آئے
زینب نے وہاں عون و محمد کے بجائے
بھائی کے سر کو گود میں لیتے ہوئے کہا
روحی وا جسمی۔۔۔

آنکھوں میں تکلم ہے وہ عاشور کا منظر
غیبت کو عزاخانہِ شبیر بنا کر
پیہم امامِ عصر کے ہونٹوں پہ ہے صدا
روحی وا جسمی۔۔۔


ya ababdillah, roohi wa jismi lakal fida

har laasha deta jaata hai maqtal se ye sada
roohi wa jismi lakal fida, ya ababdillah

humne hai kiya aap ki maadar se ye waada
majlis na rukegi kabhi matam na rukega
katjaye chahe haath ye katjaye ye gala
roohi wa jismi...

darte hai kahan maut se hum ahle shahadat
hai jaan se badkar tere rauze ki ziyarat
kehte huwe ye khaafile jaate hai karbala
roohi wa jismi...

zaalim na banade kahin ek aur baqayya
phir maula wohi shaam hai aur aap ka kunba
izne jihad kijiye mehdi ko ab ata
roohi wa jismi...

hal min jo shabbir ne maqtal may sada di
as-haab tadapne lagay tanhaai pe sheh ki
uth uth ke deta jaata tha har laasha ye sada
roohi wa jismi...

sajjad ne baba ki jo turbat ko banaya
shabbir ke seene pe jo asghar ko sulaaya
laashe se kehke doosra laasha lipat gaya
roohi wa jismi...

darbar na jaungi kehti thi ye khwahar
rote huwe shabbir ko dekha jo sin par
labbaik kehke chal padi darbar sayyeda
roohi wa jismi...

jis waqt ke zindan may pyaso ke sar aaye
zainab ne wahan aun o mohamed ke bajaye
bhai ke sar ko godh may lete huwe kaha
roohi wa jismi...

aankhon may takallum hai wo ashoor ka manzar
ghaibat ko azkhana e shabbir banakar
paiham imam e asr ke honton pe hai sada
roohi wa jismi...
Noha - Roohi Wa Jismi Lakal
Shayar: Mir Takallum
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online