رو رہا ہے خود اندھیراشام کے زندان میں
رہ گئی تنہا سکینہ شام کے زندان میں

مر گئی یہ کہتی کہتی بے وطن پردیس میں
کیا نہیں آئیں گے بابا شام کے زندان میں
رو رہا ہے۔۔۔

لہجہئ شبیر میں لوری سنانے کے لیے
خلد سے آتی ہے زہرا شام کے زندان میں
رو رہا ہے۔۔۔

بیڑیوں کے شور میں زنجیر کی جھنکار میں
اُٹھ رہا ہے اک جنازہ شام کے زندان میں
رو رہا ہے۔۔۔

صاحبِ اولاد جا کر خودہی اندازہ کرے
منہ کو آتا ہے کلیجہ شام کے زندان میں
رو رہا ہے۔۔۔

دیکھ کر معصوم کے رُخ پر تماچوں کے نشاں
موت کو آیا پسینہ شام کے زندان میں
رو رہا ہے۔۔۔

اس طرح تقسیم بانو کی کمائی ہوگئی
دشت میںاصغر سکینہ شام کے زندان میں
رو رہا ہے۔۔۔


ro raha hai khud andhera sham ke zindan may
rehgayi tanha sakina sham ke zindan may

margayi ye kehte kehte be-watan pardes may
kya nahi aayenge baba sham ke zindan may
ro raha hai....

lehjaye shabbir may lori sunane ke liye
khuld se aati hai zehra sham ke zindan may
ro raha hai....

bediyon ke shor may zanjeer ki jhankaar may
uth raha hai ek janaza sham ke zindan may
ro raha hai....

saahibe aulaad jaakar khud hi andaza karay
moo ko aata hai kaleja sham ke zindan may
ro raha hai....

dekh kar masoom ke rukh par tamachon ke nishan
maut ko aaya pasina sham ke zindan may
ro raha hai....

is tarha taqseem bano ki kamayi ho gayi
dasht may asghar sakina sham ke zindan may
ro raha hai....
Noha - Ro Raha Hai Khud

Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online