زینب آ گئی ہے شام میری ردا کے پاسباں
ردا لا کے اُڑھا دے
کھُلا ہے سر سرِ بازار ردا لا کے اُڑھا دے
اے میرے غازی علمدار ردا لاکے اُڑھا دے
کھُلا ہے سر ۔۔۔۔۔

یہ بوتراب کی بیٹی ہو کیوں نہ فریادی
اگر وہ طوق و سلاسل سے پائے آزادی
او میرا عابدِ بیمار ردا لا کے اُڑھا دے
اے میرے ۔۔۔
کھُلا ہے۔۔۔۔۔

وہ بے ردائی کے صدمے کو کیسے جھیلے گا
یہ درد عابدِ مضطر کی جاں لے گا
گزر نہ جائے دل افگار ردا لا کے اُڑھا دے
اے میرے ۔۔۔
کھُلا ہے۔۔۔۔۔

مجھے چھُپا لے میرے غازی ان نگاہوں سے
سبیل ایسی بنا کوئی طے ہو یہ رستہ
نہ دیکھے مجھ کو ستمگار ردا لا کے اُڑھا دے
اے میرے ۔۔۔
کھُلا ہے۔۔۔۔۔

غریب ہو گئی اُمت نے دی سزا مجھ کو
تُو دیکھ سکتا نہیں غازی بے ردا مجھ کو
سِناں سے گر نہیں ہر بار ردا لا کے اُڑھا دے
اے میرے ۔۔۔
کھُلا ہے۔۔۔۔۔

تجھے سکینہ کے اشکوں کی ہے قسم غازی
تمام عمر میں پھر تجھ سے کچھ نہ مانگوں گی
اے ابنِ حیدر ِ کرار ردا لا کے اُڑھا دے
اے میرے ۔۔۔
کھُلا ہے۔۔۔۔۔

تجھے تو بابا نے بخشی ہے مسندِ عالی
سوالی کوئی تیرے در سے کب گیا خالی
زمانے بھر کے مددگار ردا لا کے اُڑھا دے
اے میرے ۔۔۔
کھُلا ہے۔۔۔۔۔

کبھی جو گھر سے نکلتی میں سال میں اک بار
تُو بڑھ کے لوگوں سے کہتا تھا بند کرو بازار
وہی بہن وہی بازار ردا لا کے اُڑھا دے
اے میرے ۔۔۔
کھُلا ہے۔۔۔۔۔

سرِ حسین بھی روتا ہے نوکِ نیزہ پر
پدر بھی روتے ہیں نانا بھی بس یہی کہہ کر
کھُلے سروں کے وفادار ردا لا کے اُڑھا دے
اے میرے ۔۔۔
کھُلا ہے۔۔۔۔۔


zainab aagayi hai shaam meri rida ke pasban
rida laake udhade
khula hai sar sare bazaar rida laake udhade
ay mere ghazi alamdaar rida laake udhade
khula hai sar.............

ye buturab ki beti ho kyun na faryadi
agar wo tauq-o-salasil se paaye azadi
o mera abide bemaar rida laake udhade
ay mere........
khula hai.........

wo beridaai ke sadme ko kaise jhelega
ye dard abide muztar ki jaan lelega
guzar na jaaye tilafgaar rida laake udhade
ay mere........
khula hai.........

mujhe chupale mere ghazi in nigahon se
sabeel aisi bana koi tai ho ye raste
na dekhe mujhko sitamgaar rida laake udhade
ay mere........
khula hai....

ghareeb hogayi ummat ne di saza mujhko
tu dekh sakta nahi ghazi berida mujhko
sina se gir nahi har baar rida laake udhade
ay mere........
khula hai.........

tujhe sakina ke ashkon ki hai kasam ghazi
tamaam umr mai phir tujhse kuch na mangungi
ay ibne haidar-e-karrar rida laake udhade
ay mere........
khula hai.........

tujhe to baba ne bakshi hai masnade aali
sawaali koi tere dar se kab gaya khaali
zamane bhar ke madadgaar rida laake udhade
ay mere........
khula hai.........

kabhi jo ghar se nikalti mai saal may ek baar
tu badh ke logon se kehta tha band karo bazaar
wohi behan wohi bazaar rida laake udhade
ay mere........
khula hai.........

sare hussain bhi rota hai noke naiza par
padar bhi rotay hai nana bhi bas yahi kehkar
khule saron ke wafadaar rida laake udhade
ay mere........
khula hai.........
Noha - Rida Laake Udhade
Shayar: Mazhar
Nohaqan: Irfan Haider
Download Mp3
Listen Online