رسن بستہ حرم مجبور اور لاچار پھرتے ہیں
برہنہ سر برہنہ پا سرِ بازار پھرتے ہیں
رسن بستہ حرم مجبور

گلے میں طوق ہے زنجیر پا چلنے نہیں دیتی
مگر کانٹوں کے اوپر عابد بیمار پھرتے ہیں
رسن بستہ حرم مجبور

کہا کرتے تھے عابد عمر بھر زینب سے رو رو کر
پھوپھی آنکھوں میں زنداں کے در و دیوار پھرتے ہیں
رسن بستہ حرم مجبور

بکا کرتی تھی صغرا راتوں کو فرقت میں بابا کی
وطن کو دیکھئے کب سید ابرار پھرتے ہیں
رسن بستہ حرم مجبور

پھرائی جاتی ہے در در رسول پاک کی عطرت
مہار اونٹوں کی پکڑے عابد بیمار پھرتے ہیں
رسن بستہ حرم مجبور

حیا کے خط کو حسرت دے دیکھا کرتا ہے پیارو
کبھی جو کربلا سے جا کے زوار پھرتے ہیں
رسن بستہ حرم مجبور


rasan basta harram majboor aur lachaar phirte hai
barehna sar barehna pa sare bazaar phirte hai
rasan basta....

gale may tauq hai zanjeer-e-pa chalne nahi deti
magar kaanto ke upar abide bemaar phirte hai
rasan basta....

kaha karte thay abid umr bhar zainab se ro ro kar
phuphi aankhon may zindan ke daro dewaar phirte hai
rasan basta....

buka karti thi sughra raton ko furqat may baba ki
watan ko dekhiye kab sayyede abrar phirte hai
rasan basta....

phirayi jati hai dar dar rasoole paak ki itrat
mahaar unton ki pakde abide bemaar phirte hai
rasan basta....

haya ke khayt ko hasrat se dekha karta hai payro
kabhi jo karbala se jaake zawwar phirte hai
rasan basta....
Noha - Rasan Basta Haram

Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online