رب خیر کریں میرے بابا کی
صغریٰ کی صدا یہ ہے

کل خواب میں دیکھا تھا یہ سماں
تپتا ہوا صحرا خوں کے نشاں
تھے احمد ِ مرسل اشک فشاں
جلتے ہوئے خیموں کا تھا دھواں
رب خیر کریں ۔۔۔۔۔

کُملایا ہوا تھا کیوں اصغر
در پہ تھی کھڑی غم میں مادر
جھولا بھی جلا آتا ہے نظر
کیا کوئی نہیں جو لے اس کی خبر
رب خیر کریں ۔۔۔۔۔

گٹھڑی میں یہ کس کا لاشہ ہے
وہاں غش میں پڑی کیوں کبریٰ ہے
کیوں سر کو جھُکائے بابا ہے
روتا ہوا میرا کنبہ ہے
رب خیر کریں ۔۔۔۔۔

گرتے تھے کبھی اُٹھتے تھے کبھی
تھی اُن کی کمر کس غم سے جھُکی
چلتی تھی گلے پہ اُن کے چھُری
سر پیٹ کے روئے دادا علی
رب خیر کریں ۔۔۔۔۔

کچھ بیبیاں تھیں جو قیدی بنی
بے سایہ تھیں بے چادر تھیں
بچے تھے کہیں مائیں تھیں کہیں
روتا تھا فلک ہلتی تھی زمیں
رب خیر کریں ۔۔۔۔۔

وہ کس کے جواں کا لاشہ تھا
سینے میں تھا اُس کے نیزہ گڑھا
تھے جس کو اُٹھائے شاہِ ھُدیٰ
کیا اکبر میرا مارا گیا
رب خیر کریں ۔۔۔۔۔

دریا کے کنارے عموں میرا
ہاتھوں کو کٹائے کیوں ہے پڑا
پرچم بھی اُس کا خوں میں بھرا
کیا ماجرا ہے یا رب تُو بتا
رب خیر کریں ۔۔۔۔۔

جب بھی یہ پڑھا جائے نوحہ
چاروں طرف ہو گا شور بپا
ہے احمد و محسن کی یہ دُعا
ہم سے ہو خوش بی بی زہرا
رب خیر کریں ۔۔۔۔۔


rab khair karein mere baba ki
sughra ki sada ye hai

kal khaab may dekha tha ye saman
tapta hua sehra khoon ke nishan
thay ahmed e mursal ashk fishan
jalte hue qaimo ka tha dhuan
rab khair karein....

kumlaaya hua tha kyun asghar
dar pe thi khadi gham may madar
jhoola bhi jala aata hai nazar
kya koi nahi jo le iski khabar
rab khair karein....

ghatri may ye kiska laasha hai
wan ghash may padi kyun kubra hai
kyun sar ko jhukaye baba hai
rota hua mera kunba hai
rab khair karein....

girte thay kabhi uthte thay kabhi
thi unki kamar kis gham se jhuki
chalti thi galay pe unke churi
sar peet ke roye dada ali
rab khair karein....

kuch bibiyan thi jo qaidi bani
be saaya thi be chadar thi
bache thay kahin maayein thi kahin
rota tha falak hilti thi zameen
rab khair karein....

wo kiske jawan ka laasha tha
seene may tha uske naiza gad
thay jisko uthaye shahe huda
kya akbar mera maara gaya
rab khair karein....

darya ke kanare ammu mera
haathon ko kataye kyun hai pada
parcham bhi uska khoon may bhara
kya maajra hai ya rab tu bata
rab khair karein....

jab bhi ye pada jaye nauha
charon taraf hoga shor bapa
hai ahmed o mohsin ki ye dua
humse ho khush bibi zehra
rab khair karein....
Noha - Rab Khair Karein
Shayar: Zulfiqar Ahmed
Nohaqan: Mir Mohsin Ali
Download Mp3
Listen Online