یاد جو بے شیر کی آتی رہی
رات بھر ماں دل کو بہلاتی رہی

تشنہ کاموں کی جو یاد آتی رہی
علقمہ رہ رہ کہ بل کھاتی رہی
رات بھر ماں ۔۔۔

لے کے آتے ہیں چچا پانی ابھی
یہ سکینہ سب کو سمجھاتی رہی
رات بھر ماں ۔۔۔

بولے شِہ آواز دو اکبر مجھے
روشنی آنکھوں کی اب جاتی رہی
رات بھر ماں ۔۔۔

رو کے لیلٰی نے کہا اکبر کے ساتھ
دل کی ہر اک آرزو جاتی رہی
رات بھر ماں ۔۔۔

مُدتوں بانو کے کانوں میں صدا
اصغرِ بے شیر کی آتی رہی
رات بھر ماں ۔۔۔

سوئے قوفہ قافلہ بڑھتا رہا
اور سکینہ گُھرکیاں کھاتی رہی
رات بھر ماں ۔۔۔

رات بھر اکبر تو سوئے چین سے
ماں سرہانے اشک برساتی رہی
رات بھر ماں ۔۔۔

شِہ کا غم جب سے مجاہد کو ملا
ہر غم و فکرِ جہاں جاتی رہی
رات بھر ماں ۔۔۔


yaad jo baysheer ki aati rahi
raat bhar maa dil ko behlati rahi

tashnakamo ki jo yaad aati rahi
alqama reh reh ke balkhati rahi
raat bhar maa....

leke aate hai chacha pani abhi
ye sakina sab ko samjhati rahi
raat bhar maa....

bole sheh awaaz do akbar mujhe
roshni aankhon ki ab jaati rahi
raat bhar maa....

roke laila ne kaha akbar ke saath
dil ki har ek aarzoo jaati rahi
raat bhar maa....

muddato bano ke kaano may sada
asghare bayshher ki aati rahi
raat bhar maa....

suye koofa khaafila badta raha
aur sakina ghurkiya khaati rahi
raat bhar maa....

raat bhar akbar to soye chain se
maa sarahne ashk barsaati rahi
raat bhar maa....

sheh ka gham jab se mujahid ko mila
har ghamo fiqre jahan jati rahi
raat bhar maa....
Noha - Raat Bhar Maa
Shayar: Mujahid
Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online