ہر پیمبر پر جو آی وہ مصیبت اور ہے
کربلا والوں پہ جو گزری قیامت اور ہے

عصر تک تو جانے کیا ہو پیاس کی شدّت کہ حال
صبح سے عاشور کے سورج کی حدت اور ہے

کٹ کے سر دارلامارا پر ہے شہ کہ منتظر
کوفیوں مسلم کا  انداز سفارت اور ہے

کھینچنی ہے سینہ اکبر سے برچھی کی انی
آخری یہ شاہ دیں بیٹے کی خدمت اور ہے

ریگ زار گرم پر چادر بچھاتے ہیں حسین
کیا کرے کے لاشہ قاسم کی حالت اور ہے

باب خیبر کا  اٹھانا وہ شجاعت اور تھی
تیر کھا کر مسکرانا یہ شجاعت اور ہے

دشمنان کربلا پھر معرکہ آرا ہیں آج
مجلس و ماتم کی شاہد اب ضرورت اور ہے  


har payambar par jo aayi wo musibat aur hai
karbala walo pa jo guzri qayamat aur hai

asr tak to janay kya ho pyas ki shiddat ka haal
subha se ashoor ke suraj ki hiddat aur hai

kat ke sar darul amara par hai sheh ka muntazir
kufiyo muslim ka andaaz-e-sifarat aur hai

khaynchi hai sinay-e-akbar se barchi ki ani
aakhri ye shahe deen batey ki khidmat aur hai

raig zar-e-garm par chadar bichatay hain hussain
kya karay ke laashay qasim ki haalat aur hai

baab-e-khyber ka uthaana wo shuja-at aur thi
teer kha kar muskurana ye shuja-at aur hai

dushmanan-e-karbala phir ma-arka aara hai aaj
majlis-o-matam ki shahid ab zaroorat aur hai
Noha - Qayamat Aur Hai
Shayar: Shahid Jafer
Nohaqan: Ali Zia Rizvi