قتل ہوگئے قاسم یا علی دوہائی ہے
ہے لہو بھرا چہرہ کیسی رونمائی ہے
دیکھنے کو یہ منظر اب دولہن بھی آئی ہے
اک دن کی تھی شادی حشر تک جدائی ہے
کربلا کے دولہا کی لاش گھر میں آئی ہے
قتل ہو گئے قاسم ۔۔۔۔۔

آج کربلا والے پھر ہمارے مہماں ہیں
پھول ہو کے مہندی ہو سب عزا کے ساماں ہیں
اہتمام شادی کے اک بہن کے ارماں ہیں
غمزدوں کے نذرانے آنسوئوں کے طوفاں ہیں
قتل ہو گئے قاسم ۔۔۔۔۔

بین تھے یہ کبریٰ کے اب تو گھُٹ رہا ہے دم
بولتے نہیں کچھ بھی آج میرے ابنِ عم
کس طرح سے دکھلائے اپنے دل کا یہ عالم
بولیئے پھوپھی اماں چُپ رہیں کے روئیں ہم
قتل ہو گئے قاسم ۔۔۔۔۔

مثلِ فاطمہ کبریٰ کو ن سی دولہن ہو گی
سر تو بے ردا ہو گا ہاتھ میں رسن ہو گی
لاش جس کے وارث کی رن میں بے کفن ہو گی
اے رافی اس غم میں قوم سینہ زن ہو گی
قتل ہو گئے قاسم ۔۔۔۔۔


qatl hogaye qasim ya ali duhayi hai
hai lahoo bhara chehra kaisi runumayi hai
dekhne ko ye manzar ab dulhan bhi aayi hai
ek din ki thi shadi hashr tak judaai hai
karbala ke dulha ki laash ghar may aayi hai
qatl hogaye qasim....

aaj karbala wale phir hamare mehman hai
phool ho ke mehendi ho sab aza ke saaman hai
ehtemam shadi ke ek behan ke armaan hai
ghamzadon ke nazrane aansuon ke toofan hai
qatl hogaye qasim....

bain thay ye kubra ke ab to ghut raha hai dam
bolte nahi kuch bhi aaj mere ibne am
kis tarha se dikhlaye apne dil ka ye aalam
boliye phupi amma chup rahe ke roye hum
qatl hogaye qasim....

misle fatem kubra kaunsi dulhan hogi
sar to berida goha haath may rasan hogi
laash jiske waaris ki ran may bekafan hogi
ay rafi is gham may qaum seena zan hogi
qatl hogaye qasim....
Noha - Qatl Hogaye Qasim
Shayar: Rafi
Nohaqan: Hadi Ali Khan Muslim
Download Mp3
Listen Online