پیارے نبی کی پیاری نواسی
شام کو قیدی بن کے چلی تھی
صبر کی ملکہ زہرہ کی پیاری
شام کو قیدی بن کے چلی تھی

دیکھ رہی ہے کوئی تو آئے
شانہ پکڑ کر کاش بٹھائے
نہ ہے سروری نہ ہے امیری
شام کو قیدی بن کے چلی تھی

بھائی بھتیجی بھانجے بیٹے
سات وطن سے آئی تھی لے کے
ہائے مقدر آج اکیلی
شام کو قیدی بن کے چلی تھی

بیٹوں کا صدمہ بھائی پہ کر کے
جس نے کئے تھے شکر کے سجدے
چھوڑ کے تنہا لاش کو اس کی
شام کو قیدی بن کے چلی تھی

جس کی کنیزیں نکلی نہ باہر
بلوے میں لائے اس کو ستمگر
ہائے یہ غربت بنت علی کی
شام کو قیدی بن کے چلی تھی

کتنے ہی قیدی جس نے چھوڑے
آج وہ بی بی سر کو جھکائے
اک ردا کی بن کے سوالی
شام کو قیدی بن کے چلی تھی

سوچو وہ منظر سرور و ریحان
بھائی ہو جس کا وارث قرآن
کیسے وہ بی بی اشک بہاتی
شام کو قیدی بن کے چلی تھی


pyare nabi ki pyari nawasi
shaam ko qaidi banke chali hai
sabr ki malika zahra ki pyari
shaam.........

dekh rahi hai koi to aaye
shana pakad kar kaash bithaye
na hai sawari na hai amaari
shaam.........

bhai bhatije bhanje bete
saat watan se aayi thi leke
haaye muqaddar aaj akeli
shaam.........

beton ko sadqa bhai pe karke
jisne kiye thay shukr ke sajde
chod ke tanha laash ko uski
shaam.........

jiski kanezay nikle na bahar
balwe may laaye usko sitamgar
haaye ye ghurbat binte ali ki
shaam.........

kitne hi qaidi jisne chudaye
aaj wo bibi sar ko jhukaye
ek rida ki banke sawaali
shaam.........

socho wo manzar sarwar-o-rehaan
bhai ho jiska warise quran
kaise wo bibi ashq bahaati
shaam.........
Noha - Pyare Nabi Ki
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Ali Shanwar / Ali Jee
Download mp3
Listen Online