پہلو بھی شکستہ ہے تُربت بھی شکستہ ہے
کیا حال یہ اُمت نے زہرا کا بنایا ہے
پہلو بھی۔۔۔۔۔

خاتون کوئی غم سے یوں چُور نہیں دیکھی
ایسی کوئی دنیا میں مستور نہیں دیکھی
اٹھارہ برس میں ہی لگتی جو ضعیفہ ہے
پہلو بھی۔۔۔۔۔

دربار میں ظالم نے کی ایسی پذیرائی
کس طرح سے توں بی بی پھرلوٹ کے گھر آئی
بالوں کی سفیدی نے سب حال سُنایا ہے
پہلو بھی۔۔۔۔۔

تُو روتی رہی گھر میں حیدر سے بھی چھُپ چھُپ کے
عصمت کی طرح دکھ بھی پردے میں رہے تیرے
کچھ درد تیرے بی بی بس جانتی فضہ ہے
پہلو بھی۔۔۔۔۔

دو ایسے جنازے ہیں تاریکمیں جو اُٹھے
بس گھر کے ہی لوگوں نے دونوں کو دیئے کاندھے
اک فاطمہ زہرا ہیں اک بالی سکینہ ہے
پہلو بھی۔۔۔۔۔

مرہم تیرے زخموں کا بی بی نہ ملا اب تک
اولادِ اُمیہ کی باقی ہے جفا اب تک
رونے پہ بھی پہرہ تھا تُربت پہ بھی پہرہ ہے
پہلو بھی۔۔۔۔۔

مسمار تیرا روضہ اُمت نے کیا جب سے
بابا تیرا رہتا ہے تُربت پہ تیری تب سے
کب گُنبدِ خضرا میں بابا تیرا رہتا ہے
پہلو بھی۔۔۔۔۔

مہدی سے کوئی پوچھے کیا اُس پہ گزرتی ہے
آواز بقیہ سے جب رونے کی آتی ہے
آنکھوں سے لہو رو کر وہ بھی یہ ہی کہتا ہے
پہلو بھی۔۔۔۔۔

تصویر حقیقت کی خوابوں کو بنا دیجے
اے بی بی تکلم کو تعبیر دیکھا دیجے
ماتم تیری تُربت پہ ہوتے ہوئے دیکھا ہے
پہلو بھی۔۔۔۔۔


pehlu bhi shikasta hai turbat bhi shikasta hai
kya haal ye ummat ne zehra ka banaya hai
pehlu bhi....

khatoon koi gham se yun choor nahi dekhi
aisi kioi dunya mastoor nahi dekhi
athara baras may hi lagti jo zaeefa hai
pehlu bhi....

darbaar may zaalim ne ki aisi pazeerayi
kis tarha se tu bibi phir laut ke ghar aayi
baalon ki safedi ne sab haal sunaya hai
pehlu bhi....

tu roti rahi ghar may hyder se bhi chup chup ke
ismat ki tarha dukh bhi parde may rahe tere
kuch dard tere bibi bas jaanti fizza hai
pehlu bhi....

do aise janaze hai tareekh may jo uth-thay
bas ghar ke hi logon ne dono ko diye kaandhe
ek fatima zehra hai ek bali sakina hai
pehlu bhi....

marham tere zakhmo ka bibi na mila ab tak
aulaade umayya ki baaqi hai jafa ab tak
rone pe  bhi pehra tha turbat pe bhi pehra hai
pehlu bhi....

mismaar tera rauaza ummat ne kiya jab se
baba tera rehta hai turbat pe teri tab se
kab ghumbad-e-khizra may baba tera rehta hai
pehlu bhi....

mehdi se koi pooche kya uspe guzarti hai
awaaz baqayya se jab rone ki aati hai
aankhon se lahoo rokar wo bhi yehi kehta hai
pehlu bhi....

tasveer haqeeqat ki khwabon ko banadije
ay bibi takallum ko tabeer dikhadije
matam teri turbat pe hote hue dekha hai
pehlu bhi....
Noha - Pehlu Bhi Shikasta
Shayar: Mir Takallum
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online