نوکِ سِناں پہ کہتا تھا یہ سر حُسین کا
کیا کر سکا لعین تیرا خنجر حُسین کا

آنکھوں کا نور قلب کی طاقت چلی گئی
گھوڑے سے جب گِرا علی اکبر حُسین کا
کیا کر سکا لعین تیرا خنجر حُسین کا
نوکِ سِناں پہ ۔۔۔

زہرا نے اپنے ہاتھ رکھے تیغ کے تلے
سر کاٹنے لگا جو ستمگر حُسین کا
کیا کر سکا لعین تیرا خنجر حُسین کا
نوکِ سِناں پہ ۔۔۔

یہ امتحانِ صبر تھا ورنہ اے شامیو
بھاری تھا پوری فوج پہ اصغر حُسین کا
کیا کر سکا لعین تیرا خنجر حُسین کا
نوکِ سِناں پہ ۔۔۔

کچھ بوڑھے کچھ جوان اور ایک شیر خوار
لاکھوں کے سامنے تھا یہ لشکر حُسین کا
کیا کر سکا لعین تیرا خنجر حُسین کا
نوکِ سِناں پہ ۔۔۔

ریحان مجھ کو دیکھ کر جنت پُکار اُٹھی
آنے دو آ رہا ہے یہ نوکر حُسین کا
کیا کر سکا لعین تیرا خنجر حُسین کا
نوکِ سِناں پہ ۔۔۔


noke sina pe kehta tha ye sar hussain ka
kya kar saka layeen tera khanjar hussain ka

aankhon ka noor qalb ki taakhat chali gayi
ghoday se jab gira ali akbar hussain ka
kya kar saka layeen tera khanjar hussain ka
noke sina pe....

zehra ne apne haath rakhay taygh ke talay
sar kaatne laga jo sitamgar hussain ka
kya kar saka layeen tera khanjar hussain ka
noke sina pe....

yeh imtihaan-e-sabr tha warna ay shaamiyo
bhaari tha puri fauj pe asghar hussain ka
kya kar saka layeen tera khanjar hussain ka
noke sina pe....

kuch boodhe kuch jawaan aur ek sheer qaar
laakhon ke saamne tha ye lashkar hussain ka
kya kar saka layeen tera khanjar hussain ka
noke sina pe....

rehaan mujko dekh kar jannat pukaar uthi
aanay do aa raha hai ye naukar hussain ka
kya kar saka layeen tera khanjar hussain ka
noke sina pe....
Noha - Noke Sina Pe Kehta
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Hasan Sadiq
Download Mp3
Listen Online