جب شام کے بازار میں سیدانیاں آئی
اور چادر کی جگہ خاکِ سفر بالوں پہ لائی
ناگاہ جب غازی کی نظر کلثوم تک آئی
اور سر خاک پر عباس نے نیزے سے گرایا

ڈر ہے کلثوم کے چہرے پہ نہ پڑ جائے نظر
نوکِ نیزہ پہ ٹھہرتا نہیں عباس کا سر

اک غیور وفادار پہ اب اور ستم کیا ہو گا
جس کی چادر کا محافظ تھا وہ ہی آج ہوئی بے پردہ
ستم والواسی احساس سے دورانِ سفر
نوکِ ۔۔۔۔۔
ڈر ۔۔۔۔۔

گِر گئی راہ میں ناقے سے سکینہ تو یہ زینب نے کہا
اک چچا اور بھتیجے کی محبت تو ذرا دیکھ خدا
پُشتِ ناقہ پہ سنبھلتی نہیں شِہ کی دُختر
نوکِ ۔۔۔۔۔
ڈر ۔۔۔۔۔

شام کے لوگ تماشائی بنے اور تماشا سادات
بے وطن اور کھُلے سر سرِ راہ کرے کیا سادات
خون آنکھوں سے بہاتے شاہِ جن و بشر
نوکِ ۔۔۔۔۔
ڈر ۔۔۔۔۔

آ ندھیو خاک اُڑائو کے بنے اس سے حرم کا پردہ
گونجی جب شام کی غمناک فضائوں میں یہ زینب کی صدا
آسماں رونے لگا روئی زمیں یہ کہہ کر
نوکِ ۔۔۔۔۔
ڈر ۔۔۔۔۔

چشمِ سجاد سے بہنے لگے اُس وقت لہو کے دھارے
جب کے معصوم سکینہ کو ستمگار نے تماچے مارے
لاشہ ساحل پہ تڑپتا ہے اُدھر اور اِدھر
نوکِ ۔۔۔۔۔
ڈر ۔۔۔۔۔

رونے والو سرِ بازار کھُلے سر تھی علی کی بیٹی
گِر گیا فرطِ وفادار جو نیزے سے تو حیراں تھے شقی
پوچھا عابد سے ستمگار نے بتائو کیونکر
نوکِ ۔۔۔۔۔
ڈر ۔۔۔۔۔

ساتھ سادات کے شہزادیِ کونین سفر کرتی رہی
نوحہ کرتے ہیں نبی خاک اُڑاتے ہیں حسن اور علی
ہائے کیا وقت روتے ہیں سِناں پر سرور
نوکِ ۔۔۔۔۔
ڈر ۔۔۔۔۔

کبھی لیلیٰ کبھی فروا کبھی کلثوم کہے واویلا
چہرہ بالوں سے چھُپاتے ہوئے زینب نے یہی رو کے کہا
اماں فضہ ذرا دیکھو تو یہ غم کا منظر
نوکِ ۔۔۔۔۔
ڈر ۔۔۔۔۔

نوحہ لکھتے ہوئے عرفان یہ مظہر نے کہا تھا رو کر
کون قرطاس پہ لا سکتا ہے اولاد ِ پیعمبر کا سفر
رو دیا قلب و جگر ایک ہی مصرعہ لکھ کر
نوکِ ۔۔۔۔۔
ڈر ۔۔۔۔۔


jab shaam ke bazaar may saidaniyaan aayi
aur chadar ki jagah khaake safar baalon pe laayi
nagaah jab ghazi ki nazar kulsoom tak aayi
aur sar khaak par abbas ne naize se giraya

darr hai kulsoom ke chehre pe na padjaye nazar
noke naiza pe teharta nahi abbas ka sar

ek ghaiyoor wafadar pe ab aur sitam kya hoga
jiski chadar ka mohafiz tha wahi aaj hui beparda
shaam walo isi ehsaas se dourane safar
noke..........
darr........

girgayi raah may naaqe se sakina to ye zainab ne kaha
ek chacha aur bhatije ki mohabat to zara dekh khuda
pushte naaqa pe sambalti nahi sheh ki dukhtar
noke..........
darr........

shaam ke log tamashaayi bane aur tamasha sadaat
bewatan aur khule sar sare raah kare kya sadaat
khoon aankhon se bahaate shahe jin-o-bashar
noke..........
darr........

aandhiyon khaak udao ke banhe isse haram ka parda
goonji jab shaam ke gham naak fazaon may ye zainab ki sada
aasmaan rone laga royi zameen ye kehkar
noke..........
darr........

chasme sajjad se behne lage us waqt  lahoo ke dhaare
jab ke masoom sakina ko sitamgar ne tamache maare
laasha saahil pe tadapta hai udhar aur idhar
noke..........
darr........

rone walon sare bazaar khule sar thi ali ki beti
girgarya farte wafadaar jo naize se to hairaan thay shaqi
poocha abid se sitamgar ne batao kyun kar
noke..........
darr........

saat sadaat ke shehzadiye kounain safar karti rahi
nowha karte hai nabi khaak udatay hai hasan aur ali
haaye kya waqt hai rote hai sina par sarwar
noke..........
darr........

kabhi laila kabhi farwa kabhi kulsoom kahe wawaila
chehra baalon se chupate hue zainab ne yahi roke kaha
amma fizza zara dekho to ye gham ka manzar
noke..........
darr........

nowha likhte huwe irfan ye mazhar ne kaha tha rokar
kaun khirtaas pe la sakta hai aulade payambar ka safar
ro diye qalb-o-jigar ek hi misra likhkar
noke..........
darr........
Noha - Noke Naiza Pe Teherta
Shayar: Mazhar
Nohaqan: Irfan Haider
Download Mp3
Listen Online