نوحہ زینب کا تھا اے گیسوئوں والے اکبر
کس طرح غم تیرا مادر یہ اٹھا لے اکبر
نوحہ زینب کا تھا

کیا خبر تھی تجھے ظالم کی نظر کھائے گی
تیرے سینے میں انی برچھی کدھر آئے گی
چاند سی شکل تیری خاک میں مل جائے گی
موت بھی آئے گی بالی سے تو شرمائے گی
دور نظروں سے ہوئے گھر کے اجالے اکبر
نوحہ زینب کا تھا

آئے تھے ساتھ مدینے سے پھوپھی کے بیٹا
گھر کے اس دشت میں اب ساتھ تمہارا چھوٹا
باپ مجبور ہے کہ آنکھوں تارا ٹوٹا
ہائے پردیس میں اعدائ نے بھرا گھر لوٹا
ماں کھڑی روتی ہے سینے سے لگائے اکبر
نوحہ زینب کا تھا

اپنی تقدیر کا تیری یہ تماشہ دیکھا
باپ کے ہاتھوں پہ بن جائے کا لاشہ دیکھا
پھول قسمت میں نہ تھے خوں کا سہرا دیکھا
ماں کی آنکھوں سے وہ بہتا ہوا دریا دیکھا
تیری غمخوار کو اب کون سنبھائے اکبر
نوحہ زینب کا تھا

کوئی عباس کو دریا سے بلا لے جا کر
ہو خبر کیسے انہیں مر گئے رن میں اکبر
کیوں نہیں لیتے خبر عمو کی عون و جعفر
باپ سے اٹھے گی کس طرح سے لاش پسر
کون باقی ہے جو اب شہہ کو سنبھالے اکبر
نوحہ زینب کا تھا

خیمے جلتے ہیں نہیں کوئی سہارا بیٹا
ڈھل چکی شام ہوا شب کا اندھیرا بیٹا
داد رس کوئی نہیں غم میں ہمارا بیٹا
تیری فرقت میں نہیں جینا گوارا بیٹا
سر سے چھینی ہے ردا آکے بچا لے اکبر
نوحہ زینب کا تھا

ہاتف غیبی کی نگر صدا پہ آئی
وقت تھا عصر کا جب شہہ نے شہادت پائی
کیسے انجم یہ قیامت کی گھڑی تھی آئی
لاش پہ رونے کو بیٹا تھا نہ کوئی بھائی
کون بچوں کو بھلا آکے سنبھالے اکبر
نوحہ زینب کا تھا


noha zainab ka tha ay gaysuwo wale akbar
kis tarha gham tera madar ye uthale akbar
noha zainab ka tha ....

kya khabar thi tujhe zaalim ki nazar khaayegi
tere seene may ani barchi kidhar aayegi
chand si shakl teri khaak may mil jaayegi
maut bhi aayegi baali se to sharmayegi
door nazron se hue ghar ke ujaale akbar
noha zainab ka tha ....

aaye thay saath madine se phuphi ke beta
ghar ke is dasht may ab saath tumhara choota
baap majboor hai ke aankh ka taara toota
haaye pardes may aada ne bhara ghar loota
maa khadi roti hai seene se laga le akbar
noha zainab ka tha ....

apne taqdeer ka teri ye tamasha dekha
baap ke haaton pe binjaaye ka laasha dekha
phool qismat may na thay khoon ka sehra dekha
maa ki aankhon se wo behta hua darya dekha
teri ghamqaar ko ab kaun sambhale akbar
noha zainab ka tha ....

koi abbas ko darya se bulaale jaakar
ho khabar kaise unhe margaye ran may akbar
kyun nahi lete khabar mamu ki auno jafar
baap se uth-thegi kis tarha laashe pisar
kaun baakhi hai jo ab sheh ko sambhale akbar
noha zainab ka tha ....

qaime jalte hai nahi koi sahara beta
dhal chuki shaam hua shab ka andhera beta
daad ras koi nahi gham may hamara beta
teri furqat may nahi jeena gawara beta
sar se chinti hai rida aake bachale akbar
noha zainab ka tha ....

haatif zaidi ki nagaar sada ye aayi
waqt tha asr ka jab sheh ne shahadat paayi
kaisi anjum ye qayamat ki ghari thi aayi
laash pe rone ko beta tha na koi bhai
kaun bachon ko bhala aake sambhale akbar
noha zainab ka tha ....
Noha - Noha Zainab Ka Tha
Shayar: Anjum Zaidi
Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online