نہر پہ حضرتِ عباس کے لاشے کے قریب

اک بہن خستہ تن و کشتہ جگرخفتہ نصیب

بے نوا بے کس و بے پردہ ولاچار و غریب

لیکن اُس پر بھی محمد کے گھرانے کی نقیب

ذرد چہرے پہ ہے بکھرے ہوئے بالوں کی نقاب

جیسے جُز دانوں میں لپٹی ہوئی عِصمت کی کتاب

جا بجا جسم پہ ہیں خون کے دھبوں کے نشان

جیسے پیری میں اُٹھائی ہو کوئی لاشِ جوان

ورم آنکھوں میں کمال خم ہے تو خاموش زبان

ضبط کا پھر بھی یہ عالم ہے کہ گریہ نہ فغاں

کون بی بی ہے جو اس طرح سے جاں کھوتی ہے

جس طرح لاش پہ بھائی کہ بہن روتی ہے

مہویت کا ہے یہ عالم کہ نظر ہٹتی نہیں

چومتی ہے کبھی شانے تو کبھی جھک کہ جبیں

کبھی تھراتا ہے لاشہ کبھی مقتل کی زمیں

خوف ہے عرشِ الٰہی نہ اُلٹ جائے کہیں

لاشِ عباس پہ یہ دُخترِ حیدر تو نہیں

دیکھیئے دیکھیئے یہ زینبِ مضطر تو نہیں

رو کے کہتی ہے اُٹھو صاحبِ شمشیر اُٹھو

حیدر ِ عصر اُٹھو وقت کے شبیر اُٹھو

آلِ تطہیرکی سوئی ہوئی تقدیر اُٹھو

کاٹ دو عابدِ دلگیر کی زنجیر اُٹھو

آگ ہی آگ ہے بھڑکی ہوئی خیموں میں تمام

چھِن گئی سر سے رداجاتی ہوں میں سوئے شام

شانے کیا تیرے کٹے بندھ گئی بازو میں رسن

سر پہ کیا گُرز لگا ہو گئی بے پردہ بہن

تیری کیا جان گئی مارے گئے شاہِ زمن

فصلِ گُل ایسی لُٹی ہو گئی ہو گیا برباد چمن

چین سے سوئیں گے سب اہلِ ستم راتوں کو

خوفِ اعدائ سے نہ سو پائیں گے ہم راتوں کو

وقتِ رُخصت ہے میرے شیر اجازت دے مجھے

قافلہ چلنے کو تیار ہے ہمت دے مجھے

خِلمنِ کفرجلا دوں وہ حرارت دے مجھے

یعنی تقریر میں شمشیر کی خصلت دے مجھے

رن میں شمشیر چلانا تو میرا کام نہیں

شام و قوفہ نہ اُلٹ دوں تو میرا نام نہیں


nehr pe hazrate abbas ke laashe ke qareeb

ek behan khastatano kushta jigar khufta naseeb

benawa bekaso bepardao lachaar-o-ghareeb

lekin uspar bhi mohamad ke gharane ki naqeeb

zard chehre pe hai bikhre hue balon ki naqaab

jaise juzdanu may lipti hui ismat ki kitab

jabaja jism pe hai khoon ke dhabo ke nishan

jaise pidi may uthayi ho koi laahshe jawan

waram ankhon may kamal kham hai to khamosh zaban

zapt ka phir bhi ye aalam hai ke girya na fughan

kaun bibi hai jo is tarha se jaan khoti hai

jis tarha laash pe bhai ke behan roti hai

mehwiyat ka hai ye aalam ke nazar hat-ti nahi

choomti hai kabhi shane to kabhi jhuk ke jabeen

kabhi tharra-ta hai laasha kabhi maqtal ki zameen

khauf hai arshe ilaahi na ulat jaye na kahin

lashe abbas pe ye dukhtare hyder to nahi

dekhiye dekhiye ye zainabe muztar to nahi

roke kehti hai utho sahibe shamsheer utho

hydere asr utho waqt ke shabbir utho

aale tatheer ki soyi hui taqdeer utho

kaat do abide dilgeer ki zanjeer utho

aag hi aag hai bhadki hui qaimo may tamam

chin gayi sar se rida jati hoo mai suye sham

shane kya tere kate band gayi bazu may rasan

sar pe kya gurz laga hogayi beparda behan

teri kya jaan gayi maare gaye shahe zaman

fasle gul aisi luti hogaya barbaad chaman

chain se soyenge sab ahle sitam raton ko

khaufe aada se na so paenge hum raton ko

waqte ruqsat hai mere sher ijazat de mujhe

qafila chalne ko tayyar hai himmat de mujhe

qilmane kufr jala doo wo hararat de mujhe

yani taqreer may shamsheer ki qaslat de mujhe

ran may shamsheer chalana mere kaam nahi

sham o kufa na ulat doo to mere naam nahi
Noha - Nehr Pe Hazrate Abbas

Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online