ننگے سر جب کبھی ناموسِ گرفتار چلے
پردہ داری کے لیئے سایہِ دیوار چلے

اُس نے اک سجدئہ آخر سے سبق سیکھا ہے
عالمِ شوق میں جب کوئی سوئے دار چلے
ننگے سر جب کبھی۔۔۔

ایک اشارہ ہے یہ ہمشیرِ برادر کی طرف
نفس کے ساتھ اگر سانس کی رفتار چلے
ننگے سر جب کبھی۔۔۔

مجھکو ہر لمحہ مسیحا کا گماں ہوتا ہے
ریگ زاروں میں اگر کوئی بھی بیمار چلے
ننگے سر جب کبھی۔۔۔

اُس کے ہمراہ ذرا آپ بھی آہستہ چلیں
پا با زنجیر اگر کوئی گرفتار چلے
ننگے سر جب کبھی۔۔۔

بیبیاں ہوں تو ردائیں بھی مہیا کیجیئے
قافلہ جب بھی کوئی شہر کہ بازار چلے
ننگے سر جب کبھی۔۔۔

ظلم کی حد ہے کہ جب عالمِ تنہائی میں
خستہ جاں پر سرِ مقتل کبھی تلوار چلے
ننگے سر جب کبھی۔۔۔

ایک عالم میں رہے سانس میں روتا شتیب
سبز پرچم کے تلے جب بھی علمدار چلے
ننگے سر جب کبھی۔۔۔



nange sar jab kabhi namoose giraftaar chalay
parda daari ke liye saaya e deewar chalay

usne ek sajda e aakhir se sabaq seekha hai
aalame shauq may jab koi suye daar chalay
nange sar jab kabhi....

ek ishaara hai ye hamsheer e biradar ki taraf
nafs ke saath agar saans ki raftaar chalay
nange sar jab kabhi....

mujhko har lamha maseeha ka gumaan hota hai
rayg zaaron may agar koi bhi bemaar chalay
nange sar jab kabhi....

us kay hamraah zara aap bhi aahista chalay
pa ba zanjeer agar koi giraftaar chalay
nange sar jab kabhi....

bibiyan ho to ridayein bhi mohayya kijaye
khafila jab bhi koi shehr ke bazaar chalay
nange sar jab kabhi....

zulm ki had hai ke jab aalame tanhai may
khastaja par sar e maqtal kabhi talwar chalay
nange sar jab kabhi....

ek aalam may rahe saans may rota hai shateeb
sabz parcham ke talay jab bhi alamdaar chalay
nange sar jab kabhi....
Noha - Nange Sar Jab Kabhi

Nohaqan: Tableeq e Imamia (Nazim Hussain)
Download Mp3
Listen Online