نانا تیری زینب نے وہ درد اُٹھائے ہیں
ظالم کا ظلم دیکھا آنسو نکل آئے ہیں

میں شام کی گلیوں سے سر ننگے گُزر آئی
نانا تیری اُمت نے دن یہ بھی دیکھائے ہیں
نانا تیری زینب نے ۔۔۔

پتھر جو برستے تھے زہرا کے گھرانے پر
اس حال پہ سورج نے خود اشک بہائے ہیں
نانا تیری زینب نے ۔۔۔

یہ خون بھرا کُرتا ہے تیرے نواسے کا
بھائی کی نشانی ہم تیرے لیئے لائے ہیں
نانا تیری زینب نے ۔۔۔

غم کھا گیا زینب کو نانا علی اکبر کا
مت پُوچھو وطن میں ہم کس طرح سے آئے ہیں
نانا تیری زینب نے ۔۔۔

زنداں کے اندھیرے میں نیند آئی سکینہ کو
ہم قبر سکینہ کی وہاں چھوڑ کے آئے ہیں
نانا تیری زینب نے ۔۔۔

سوغاتِ سفر نانا پردیس سے ہم قیدی
یہ نیل رسن کے ہیں جو شانوں پہ لائے ہیں
نانا تیری زینب نے ۔۔۔


nana teri zainab ne wo dard uthaye hai
zaalim ka zulm dekha aansu nikal aaye

mai shaam ki galiyo se sar nange guzar aayi
nana teri ummat ne din ye bhi dikhaye hai
nana teri zainab ne....

pathar jo baraste thay zehra ke gharanay par
is haal pe suraj ne khud ashk bahaaye hai
nana teri zainab ne....

ye khoon bhara kurta hai tere nawase ka
bhai ki nishani hum tere liye laaye hai
nana teri zainab ne....

gham kha gaya zainab ko nana ali akbar ka
mat poocho watan may hum kis tarha se aaye hai
nana teri zainab ne....

zindan ke andhere may neend aayi sakina ko
hum khabr sakina ki wahan choad ke aaye hai
nana teri zainab ne....

saughat-e-safar nana pardes se hum qaidi
ye neel rasan ke hai jo shano pe laaye hai
nana teri zainab ne....
Noha - Nana Teri Zainab Ne

Nohaqan: Hasan Sadiq
Download Mp3
Listen Online