منہال نے اک دن آ کے کہا
اے مولا میرے اے ذین العبا
غم زیادہ کہاں گزرے تم پر
دل تھام لیا خوں رونے لگے
خوں روتے ہوئے بس اتنا کہا
الشام الشام الشام

منہال تڑپ کر کہنے لگا
رونے کا سبب مولا ہے کیا
میراث شہادت آپ کی ہے
مولا نے کہا لاریب مگر
اُف توں نے نہیں انصاف کیا
بے شک میراث شہادت ہے
یہ آلِ نبی کی فطرت ہے
سر بے پردہ ماں بہنوں کا
اک یہ بھی میری میراث تھی کیا
الشام الشام ۔۔۔۔۔

منہال میں کیسے زندہ ہوں
پل پل جیتا ہوں مرتا ہوں
ان آنکھوں نے جو کچھ دیکھا
اک یہ بھی میری میراث تھی کیا
الشام الشام ۔۔۔۔۔

آغاز ہے شامِ گریباں کا
خوں ٹپکا چشمِ گریہ کا
بہنوں کا کھُلا سر سامنے تھا
اک یہ بھی میری میراث تھی کیا
الشام الشام ۔۔۔۔۔

کیسے بھولوں اُس منظر کو
نیزے پہ پھُوپھی کی چادر کو
ساحل سے جو غازی نے دیکھا
اک یہ بھی میری میراث تھی کیا
الشام الشام ۔۔۔۔۔

ناموسِ پیعمبر بے چادر
اور سر پہ برستے ہوں پتھر
تر خون میں تھا سب کا چہرہ
اک یہ بھی میری میراث تھی کیا
الشام الشام ۔۔۔۔۔

نہ غم طوق و زنجیر کا تھا
غم پھوپھیوں کا ہمشیر کا تھا
بازار کے غم نے مار دیا
اک یہ بھی میری میراث تھی کیا
الشام الشام ۔۔۔۔۔

اللہ میرے یہ حدِ ستم
پہ روتے کھڑے دربار میں ہم
اور تخت پہ قاتل بیٹھا تھا
اک یہ بھی میری میراث تھی کیا
الشام الشام ۔۔۔۔۔

اک شام کا اک زندان کا غم
معصوم سی ننھی جان کا غم
جوہو نہ سکی مر کے بھی رہا
اک یہ بھی میری میراث تھی کیا
الشام الشام ۔۔۔۔۔

ریحان و سرور شام چلو
اور شام کی وہ گلیاں دیکھو
بیمار جہاں کہتا ہی رہا
اک یہ بھی میری میراث تھی کیا
الشام الشام ۔۔۔۔۔


minhal ne ek din aake kaha
ay maula mere ay zainul leban
gham zyada kahan guzre tum par
dil thaam liya khoon rone lagay
khhon rote hue bas itna kaha
as-shaam as-shaam as-shaam

minhal tadap kar kehne laga
rone ka sabab maula hai kya
miraas shahadat aap ki hai
maula ne khaa la raib magar
uff tune nahi insaf kiya
beshak miraas shahadat hai
ye aale nabi ki fitrat hai
sar be-parda maa behno ka
ek ye bhi meri miraas thi kya
as-shaam as-shaam....

minhal mai kaise zinda hoo
pal pal jeeta hoo marta hoo
in aankhon ne jo kuch dekha
ek ye bhi meri miraas thi kya
as-shaam as-shaam....

aghaaz hai sham e ghariban ke
khoon tapka chasme girya ke
behno ka khula sar saamne tha
ek ye bhi meri miraas thi kya
as-shaam as-shaam....

kaise bhoolun us manzar ko
naize pe phupi ki chadar ko
saahil se jo ghazi ne dekha
ek ye bhi meri miraas thi kya
as-shaam as-shaam....

namoose payambar be-chadar
aur sar pe baraste ho pathar
tar khoon may tha sab ka chehra
ek ye bhi meri miraas thi kya
as-shaam as-shaam....

na gham tauq o zanjeer ka tha
gham phupiyon ka hamsheer ka tha
bazaar ke gham ne maar daya
ek ye bhi meri miraas thi kya
as-shaam as-shaam....

allah mere ye hadde sitam
peh rote khade darbar may hum
aur taqt pe qaatil baitha tha
ek ye bhi meri miraas thi kya
as-shaam as-shaam....

ek shaam ka ek zindan ka gham
masoom si nanhi jaan ka gham
jo ho na saki marke bhi reha
ek ye bhi meri miraas thi kya
as-shaam as-shaam....

rehaan o sarwar shaam chalo
aur shaam ki wo galiyan dekho
bemaar jahan kehta hi raha
ek ye bhi meri miraas thi kya
as-shaam as-shaam....
Noha - Na Ro Maula
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online