نہ ملے گا تجھے شبیر سا بھائی زینب
ڈھونڈنے جائے گی گر ساری خدائی زینب
نہ ملے گا تجھے شبیر سا۔۔۔

اپنے اشکوں سے جلا شامِ غریباں کے چراغ
توں ہے اٹھارہ چراغوں کی اکائی زینب
نہ ملے گا تجھے شبیر سا۔۔۔

جانے کیا شامِ غریباں میں ستم ٹوٹے ہیں
عمر بھر چین سے پھر سو نہیں پائی زینب
نہ ملے گا تجھے شبیر سا۔۔۔

دو پسر توں نے تو دو بازو دیئے غازی نے
پہلے تو رسمِ وفا توں نے نبھائی زینب
نہ ملے گا تجھے شبیر سا۔۔۔

سرخ یہ کس کے لہو سے ہوئی پوشاک تیری
لاش کیا سینے سے اکبر کی لگائی زینب
نہ ملے گا تجھے شبیر سا۔۔۔

پانی کو دیکھ کے کیوں کر نہ جگر ٹکڑے ہو
کھا گئی ہے تیرے غازی کو ترائی زینب
نہ ملے گا تجھے شبیر سا۔۔۔

ہائے کس شان سے نکلی تھی وطن سے زینب
کیسی غربت کو سمیٹے ہوئے آئی زینب
نہ ملے گا تجھے شبیر سا۔۔۔

روحِ عباسِ علمدار نہ تڑپے کیوں کر
بے ردا شام کے دربار میں آئی زینب
نہ ملے گا تجھے شبیر سا۔۔۔

سارے غم بھول گئے سرور و ریحان مگر
فرشِ غم ہے تیرے بھائی کی بچھائی زینب
نہ ملے گا تجھے شبیر سا۔۔۔


na milega tujhe shabbir sa bhai zainab
dhoondne jaayegi gar saari khudai zainab
na milega tujhe shabbir sa....

apne ashkon se jala shaam-e-ghareeban ke charaag
tu hai atthara chirago ki ek-aayi zainab
na milega tujhe shabbir sa....

jaane kya shaam-e-ghareeban my sitam toote hain
umr bhar chain se phir so nahi paayi zainab
na milega tujhe shabbir sa....

do pisar tunay to do baazu diye ghazi ne
pehle to rasmay wafa tune nibhaai zainab
na milega tujhe shabbir sa....

surkh yeh kiske lahoo se hui poshaak teri
laash kya seenay se akbar ki lagaai zainab
na milega tujhe shabbir sa....

pani ko dekh ke kyon kar na jigar tukday ho
kha gayi hai tere ghazi ko taraai zainab
na milega tujhe shabbir sa....

haaye kis shaan se nikli thi watan se zainab
kaisi ghurbat ko samayte huwe aayi zainab
na milega tujhe shabbir sa....

roohay abbas-e-alamdaar na tadpe kyon kar
be-rida shaam ke darbar may aayi zainab
na milega tujhe shabbir sa....

saare gham bhool gaye sarwar-o-rehaan magar
farsh-e-gham hai tere bhaai ki bichai zainab
na milega tujhe shabbir sa....
Noha - Na Milega Tujhe Shabbir
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online