کربلا سے چلی اک بے کس بہن
ہا اس عالمِ غربت وطن یاد آیا
سب شہیدوں کو کہتی ہو ئی ا لوداع
بھائی کی لاش پہ پہنچی تو کفن یاد آیا
خود کو ناقے سے گِرا کر زینب کہنے لگی رورو کر
نہ دیس اپنا ہے نہ لوگ اپنے ہیں

میں کیسے کفن دوں میرے مظلوم برادر
نہ دیس اپنا ہے ۔۔۔۔۔

یہ دیکھ ذرا اے تشنہ دہن
شانوں کو میرے جکڑے ہے رسن
اور اُس پہ ستم ہے سر پر نہیں چادر
میں کیسے کفن دوں۔۔۔۔۔
نہ دیس اپنا ہے ۔۔۔۔۔

کل ساتھ تیرے ہر گام چلی
اب قیدی بنی اور شام چلی
اس درد کے مارے روتی ہوں کھُلے سر
میں کیسے کفن دوں۔۔۔۔۔
نہ دیس اپنا ہے ۔۔۔۔۔

بابا ہے امیرِکون و مکاں
ہے تیرا لقب سردارِ جناں
زینب تو ہوئی ہے بے چادر ے گھر
میں کیسے کفن دوں۔۔۔۔۔
نہ دیس اپنا ہے ۔۔۔۔۔

اے بھائی تیری غربت کی قسم
تا عمر نہیں بھُولوں گی یہ غم
پردیس میں آ کر، نوحہ ہے لبوں پر
میں کیسے کفن دوں۔۔۔۔۔
نہ دیس اپنا ہے ۔۔۔۔۔

کیا ظلم سہے تجھ کو ہے خبر
ہے آلِ محمد خاک بسر
ہفتم سے نہیں ہے ، پانی بھی میسر
میں کیسے کفن دوں۔۔۔۔۔
نہ دیس اپنا ہے ۔۔۔۔۔

ہوتا جو مدینہ بھائی میرے
مل جاتا کفن مظلوم تجھے
اس دشتِ بلا میں، مجبور ہے خواہر
میں کیسے کفن دوں۔۔۔۔۔
نہ دیس اپنا ہے ۔۔۔۔۔

ہے کشتئہ تیغِ ظلم بتا
جب کوئی میرا یاور نہ رہا
مقتولِ جفا ہے، عباس اور اکبر
میں کیسے کفن دوں۔۔۔۔۔
نہ دیس اپنا ہے ۔۔۔۔۔

کیا کیا نہ ہوئی زینب پہ جفا
سب خیمے جلے اسباب لُٹا
پر سب سے بڑا ہے،یہ غم میرے دل پر
میں کیسے کفن دوں۔۔۔۔۔
نہ دیس اپنا ہے ۔۔۔۔۔

عرفان اور مظہر کہہ نہ سکے
جو بنتِ علی نے بین کیئے
پھٹتا ہے کلیجہ ، اس بات کو سُن کر
میں کیسے کفن دوں۔۔۔۔۔
نہ دیس اپنا ہے ۔۔۔۔۔


karbala se chali ek bekas behen
haa is aalam-e-gurbat watan yaad aaya
sab shaheedo ko kehti huvi alveda
bhai ki laash pe pahunchi to kafan yaad aaya
khud ko naaqe se gira-kar zainab kehne lagi ro ro kar
na des apna hai na log apne hai

mai kaise kafan doo mere mazloom baradar
na des apna hai....

ye dekh zara ay tashnadahan
shano ko mere jakde hai rasan
aur uspe sitam hai sar par nahi chadar
mai kaise kafan doo....
na des apna hai...

kal saath tere har gaam chali
ab qaidi bani aur shaam chali
is dard ke maare roti hoo khule sar
mai kaise kafan doo....
na des apna hai...

baba hai ameere kauno makan
hai tera laqab sardare jina
zainab to huvi hai be-chadar beghar
mai kaise kafan doo....
na des apna hai...

ay bhai teri ghurbat ki qasam
ta umr nahi bhuloongi ye gham
pardes may aakar, nauha hai labon par
mai kaise kafan doo....
na des apna hai...

kya zulm sahe tujhko hai khabar
hai aal-e-mohamad khaak basar
haftum se nahi hai, pani bhi mayassar
mai kaise kafan doo....
na des apna hai...

hota jo madina bhai mere
mil jaata kafan mazloom tujhe
is dasht-e-bala may, majboor hai khwaahar
mai kaise kafan doo....
na des apna hai...

hai kushta-e-tayghe zulm bata
jab koi mera yawar na raha
maqtool-e-jafa hai, abbas aur akbar
mai kaise kafan doo....
na des apna hai...

kya kya na huwi zainab pe jafa
sab qaime jale asbaab luta
par sab se bada hai, ye gham mere dil par
mai kaise kafan doo....
na des apna hai...

irfan aur mazhar kehna sake
jo binte ali ne bayn kiye
phat-ta hai kaleja, is baat ko sunkar
mai kaise kafan doo....
na des apna hai...
Noha - Na Des Apna Hai
Shayar: Mazhar Abidi
Nohaqan: Irfan Haider
Download Mp3
Listen Online