نہ مہمل ہے نہ ہودج ہے
نہ لشکر کی وہ سج دھج ہے
نہ سر پہ علم نہ چادر ہے
اللہ یہ کیسا منظر ہے
مسافرانِ مصیبت وطن میں آتے ہیں

سفر سے آتے ہیں سوغاتِ درد لاتے ہیں
مسافرانِ مصیبت ۔۔۔۔۔

کیا سلام محمد کے آستانے کو
لُٹا کے آئے ہیں زہرا کے سب گھرانے کو
نہ قبول توں ہم بے کسوں کے آنے کو
یہ نوحہ کرتے ہیں اور اشک خوں بہاتے ہیں
مسافرانِ مصیبت ۔۔۔۔۔

مدینہ ہم تیرے والی کو آئے ہیں کھو کر
مدینہ کوفے میں سر ننگے ہم پھرے دردر
مدینہ داغِ رسن ہیں ہمارے شانوں پر
اُٹھا کے ہاتھ مدینے کو یہ سناتے ہیں
مسافرانِ مصیبت ۔۔۔۔۔

ہر اک قدم ہے بُقا کب لبوں پہ بین نہیں
ہم آئے زندہ پر زہرا کا نورِ عین نہیں
مدینہ اکبر و قاسم نہیں حسین نہیں
یہ کیسے کیسے جواں تھے جو یاد آتے ہیں
مسافرانِ مصیبت ۔۔۔۔۔

مدینے والو!کہو اُس بہن کی کیا تقدیر
جو دیکھے اپنے برادر کے حلق پر شمشیر
لہو میں غرق جو دیکھے حسین کی تصویر
لہو میں کیا یونہی بھائی کا سر دیکھتے ہیں
مسافرانِ مصیبت ۔۔۔۔۔

بتائو کہتے ہیں کیا سب اُس اماں جائے کو
جو اربعیں تلک دے کفن نہ بھائی کو
بہن دیکھائے گی منہ کس طرح خدائی کو
کفن دیا ہے نہ اُن کی لحد بناتے ہیں
مسافرانِ مصیبت ۔۔۔۔۔

چلا بشیر یہ دیتا ہوا خبر ہر جا
مگر محلہِ ہاشم میں دیکھتا ہے کیا
کہ اک مریضہ سرِ راہ ہے کھڑی تنہا
ہے منتظر کہ وہ کنبے کے لوگ آتے ہیں
مسافرانِ مصیبت ۔۔۔۔۔

خبر یہ پھیلی تو ماتم ہر ایک گھر میں ہوا
نکل نکل پڑیں سب عورتیں برہنہ پا
گری زمین پہ صغریٰ کہ اُس پہ چرخ گرا
جو سوگوار ہیں صغریٰ کے پاس آتے ہیں
مسافرانِ مصیبت ۔۔۔۔۔

فضائے درد میں لے کر اُداسیاں آئیں
سفر سے لوٹ کے اِدھر بھوکی پیاسیاں آئیں
اُٹھو رسول تمھاری نواسیاں آئیں
کہ خود کو اونٹوں سے اہلِ حرم گراتے ہیں
مسافرانِ مصیبت ۔۔۔۔۔

جو آئی کان میں آواز بانوئِ مضطر
کہاں ہو اے میرے والی امام جن و بشر
تڑپ کے رہ گئی صغریٰ بپا ہوا محشر
دبیر بس کے اب افلاک تھر تھراتے ہیں
مسافرانِ مصیبت ۔۔۔۔۔


na mehmil hai na haudaj hai
na lashkar ki wo sajdhaj hai
na sar pe alam na chadar hai
allah ye kaisa manzar hai
musafirane musibat watan may aate hai

safar se aate hai saughate dard laate hai
musafirane musibat....

kiya salam mohamed ke aastane ko
luta ke aaye hai zehra ke sab gharane ko
na kar qubool tu hum bekaso ke aane ko
ye noha karte hai aur ashk khoon bahate hai
musafirane musibat....

madina hum tere waali ko aaye hai kho kar
madina koofe may sar nange hum phire dar dar
madina daaghe rasan hai hamare shano par
utha ke haath madine ko ye sunate hai
musafirane musibat....

har ek qadam hai buka kab labon pe bayn nahi
hum aaye zinda par zehra ka noor e ayn nahi
madina akbar o qasim nahi hussain nahi
ye kaise kaise jawan thay jo yaad aate hai
musafirane musibat....

madine walon kaho us behan ki kya taqdeer
jo dekhe apne biradar ke halq par shamsheer
lahoo may ghark jo dekhe hussain ki tasveer
lahoo may kya yunhi bhai ka sar dikhate hai
musafirane musibat....

batao kahte hai kya sab us amma jayi ko
jo arbaeen talak de kafan na bhai ko
behan dikhayegi moo kis tarha khudayi ko
kafan diya hai na unki lehed banate hai
musafirane musibat....

chala basheer ye deta huwa khabar har ja
magar mehellaye hashim may dekhta hai kya
ke ek mareeza sare raah hai khadi tanha
hai muntazir ke wo kunbe ke log aate hai
musafirane musibat....

khabar ye phaili to matam har ek ghar may huwa
nikal nikal padi sab aurate barehna pa
giri zameen pe sughra ke uspe charkh gira
jo soghwar hai sughra ke paas aate hai
musafirane musibat....

fizay e dard may lekar udasiya aayi
safar se lut ke idhar bhooki pyasian aayi
utho rasool tumhari nawasiya aayi
ke khud ko oonto se ehle haram ghirate hai
musafirane musibat....

jo aayi kaan may awaaze bano e muztar
kahan ho ay mere waali imame jin o bashar
tadap ke rehgayi sughra bapa huwa mehshar
dabir bas ke ab aflaaq thar-tharate hai
musafirane musibat....
Noha - Musafirane Musibat
Shayar: Dabir
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online