میں شام جائوں گی نہ تمہیں چھوڑ کے تنہا
مجھے روک لو بابا
بس آج سے قدموں میں سوئے گی سکینہ
مجھے روک لو بابا

مل جائے جو موقع تو کروں سب سے نیاوت
بیٹی کہیں بن کر کہیں ہمشیر کی صورت
روئے گی ہر اک لاش پہ جا جا کے یہ دُکھیا
مجھے روک لو بابا
میں شام جائوں گی ۔۔۔

بے جان سہی سامنے نظروں کے ہے میرے
مقتل میں ہے بکھرے ہوئے سب اپنوں کے لاشے
اس دشت میں آباد ہے بابا میری دُنیا
مجھے روک لو بابا
میں شام جائوں گی ۔۔۔

بُجھ جائے گی اس طرح میری تشنہ دہانی
پیاسوں کو تیرے نام پہ پلوائوں گی پانی
غازی کی قسم آج سے بن جائوں گی سقہ
مجھے روک لو بابا
میں شام جائوں گی ۔۔۔

بیوائوں کا ادا فرض کرے گی تیری بیٹی
نزدیک یہاں سے کوئی آواز تو ہو گی
لائوں گی کفن مانگ کے لوگوں سے تمہارا
مجھے روک لو بابا
میں شام جائوں گی ۔۔۔

منظر وہ تکلم کا قلم رُک نہیں سکتا
جب شمر نے بچی کو جُدا شہہ سے کیا تھا
کہتی رہی شبیر سے مُڑ مُڑ کے سکینہ
مجھے روک لو بابا
میں شام جائوں گی ۔۔۔


mai shaam jaungi na tumhe chor ke tanha
mujhe rok lo baba

bas aaj se qadmo may soyegi sakina
mujhe rok lo baba

miljaye jo maukha to karun sab se niyawat
beti kahin bankar kahin hamsheer ki surat
royegi har ek laash pe ja ja ke ye dukhiya
mujhe rok lo baba
mai shaam jaungi....

bejaan sahi saamne nazron ke hai mere
maqtal may hai bikhre hue sab apno ke laashe
is dasht may abaad hai baba meri dunya
mujhe rok lo baba
mai shaam jaungi....

bujh jayegi is tarha meri tashnadahani
pyaso ko tere naam pe pilwaungi pani
ghazi ki qasam aaj se banjaungi saqqa
mujhe rok lo baba
mai shaam jaungi....

bewon ka ada farz karegi teri beti
nazdeek yahan se koi awaaz to hogi
laungi kafan maang ke logon se tumhara
mujhe rok lo baba
mai shaam jaungi....

manzar wo takallum ka qalam ruk nahi sakta
jab shimr ne bachi ko juda sheh se kiya tha
kehti rahi shabbir se mud mud ke sakina
mujhe rok lo baba
mai shaam jaungi....
Noha - Mujhe Rok Lo Baba
Shayar: Mir Takallum
Nohaqan: Shahid Baltistani
Download Mp3
Listen Online