جب رہا شام کے زندان سے ہوئے اہلِ حرم
کیا خوشی ہوتی دوبالاہوا سادات کا غم
جس کو ارمانِ رہائی تھا ہوئی وہ بے دم
اک ننھی سی لحد پر تھا مسلسل ماتم
سن کے فریاد و فغاں سانس رُکی جاتی تھی
قبر سے بالی سکینہ کی صدا آتی تھی

وطن جانے والو مجھے بھی وطن لے چلو
مجھے بھی وطن لے چلو

میں کیسے رہوں گی یہاں پر
یہاں ہے بھلا کون میرا
مجھے بھی وطن لے چلو۔۔۔

رہا ہو کے گھر جانے والو،مجھے بھی کہیں پر بٹھا لو
شہیدوں کے سر ہیں جہاں پر،مجھے بھی وہیں پر سُلا دو
میں بابا کے سر سے لپٹ کر،سفر کاٹ لوں گی یہ سارا
مجھے بھی وطن لے چلو۔۔۔

نہ یوں چھوڑ کر جائو اماں،مجھے شامیوں کے سہارے
یتیمی کی ماری ہوئی کو،ستایا بہت ظالموں نے
بہت خوف آتا ہے مجھ کو،تمہیں واسطہ سیدہ کا
مجھے بھی وطن لے چلو۔۔۔

سُنا ہے کے واپس ملے ہیں،تمہیں شمر سے میرے گوہر
بھلا کیا کرو گی تم اُن کا،اگر رہ گئی میں یہاں پر
انہیں بھی امانت سمجھ کر،یا دفنا دو زنداں میں یا
مجھے بھی وطن لے چلو۔۔۔

جو پہنچے مدینہ تو اماں،پھر رختِ مصیبت نہ آئے
سِناں اور اکبر کی باتیں،سُنانیں کی نوبت نہ آئے
میری لاش کو دیکھ کر ہی،سمجھ لے گی ہر بات صغریٰ
مجھے بھی وطن لے چلو۔۔۔

یہ ہی سوچ کر زیرِ تُربت،تڑپتا ہے دُکھیا کا لاشہ
مجھے شمر کے شہر میں اب،ہمیشہ ہی رہنا پڑے گا
دھڑکتا نہیں پھر بھی اماں،یہ دل کانپ جاتا ہے میرا
مجھے بھی وطن لے چلو۔۔۔

سرِ شاہِ دیں کچھ تو بولو،سفارش کرو کچھ ہماری
قضا آ گئی ہے تو پھر کیا،میں بیٹی ہوں بابا تمہاری
نہ انکار کر پائیں گی وہ،پھوپھی سے ذرا کہہ دو بابا
مجھے بھی وطن لے چلو۔۔۔

یہ حالت تھی ہر اک قدم پر،مدینے کے رستے میں اکبر
گری تھی جہاں پر سکینہ،تماچے لگے تھے جہاں پر
وہاں خاک سے قیدیوں کو،صدائیں یہ آتی تھی ہر جا
مجھے بھی وطن لے چلو۔۔۔


jab riha sham ke zindan se hue ahle haram
kya khushi hoti dubala hua sadaat ka gham
jisko armane rihaai tha hui wo bedam
ek nanhi si lehad par tha musalsal matam
sunke faryad-o-fughan saans ruki jaati thi
qabr se bali sakina ki sada aati thi

watan jaane walon mujhe bhi watan le chalo
mujhe bhi watan le chalo

mai kaise rahungi yahan par
yahan hai bhala kaun mera
mujhe bhi watan le chalo....

reha hoke ghar jaane walon,  mujhe bhi kahin par bitha lo
shaheedo ke sar hai jahan par, mujhe bhi wahin par sulado
mai baba ke sar se lipat kar, safar kaat-lungi ye saara
mujhe bhi watan le chalo....

na yun chor kar jao amma, mujhe shamiyon ke sahare
yateemi ki maari hui ko, sataya bahot zaalimo ne
bahot khauf aata hai mujhko, tumhe waasta sayyeda ka
mujhe bhi watan le chalo....

suna hai ke wapas milay hai, tumhein shimr se mere gowhar
bhala kya karoge tum unka, agar rehgayi mai yahan par
inhi bhi amaanat samajh kar, ya dafna do zindan may ya
mujhe bhi watan le chalo....

jo pahunchay madina to amma, phir raqte musibat na aaye
sina ur akbar ki baatein, sunane ki naubat na aaye
meri laash ko dekh kar hi, samajh legi har baat sugra
mujhe bhi watan le chalo....

yehi soch kar zayre turbat, tadapta hai dukhiya ka laasha
mujhe shimr ke shehr may ab, hamesha hi rehna padega
dhadakta nahi phir bhi amma, ye dil kaamp jaata hai mera
mujhe bhi watan le chalo....

sare shahe deen kuch to bolo, sifarish karo kuch hamari
khaza aagayi hai to phir kya, mai beti hoo baba tumhari
na inkaar kar payengi wo, phupi se zara kehdo baba
mujhe bhi watan le chalo....

ye haalat thi har ek qadam par, madine ke raste may akbar
giri thi jahan par sakina, tamache lage thay jahan par
wahan khaak se qaidiyo ko, sadayein ye aati thi har ja
mujhe bhi watan le chalo...
Noha - Mujhe Bhi Watan
Shayar: Hasnain Akbar
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online