ملتی ہی نہیںکوئی مثال ایسی دہر میں
بے گوروکفن بھائی ہمشیر سفر میں
ملتی۔۔۔۔

حق فاطمہ زہرا کا غصب جس نے کیا ہے
وہ دوست بھلا کیا ہے پیمبر کی نظر میں
ملتی۔۔۔۔

چھ ماہ کے بچے کو بھی نیزے پہ چڑھایا
کیا چھوڑا ہے امت نے میرے بھائی کے گھر میں
ملتی۔۔۔۔

خاموش چلی جائوںبھلا شام میں کیسے
شبیر کا لاشہ ہے میری راہ گزر میں
ملتی۔۔۔۔

عابد نے کہا خون یونہی روتا رہوںگا
پھپھی کی اسیری نے کیے زخم جگر میں
ملتی۔۔۔۔

کرتی تھیںخواتین ملاقات کوجس میں
زینب سرِعریاں ہیں اُسی کوفہ شہر میں
ملتی۔۔۔۔

بہتے ہیںغمِ شاہ میں جو آنسو وہ کہاں ہیں
محشر میں ملیں گے وہ تمہیںلال وگوہر میں
ملتی۔۔۔۔

سن کر امیر آج شہِ غم کا یہ نوحہ
ہر ظلم کا منظر ہے میری دیدئہ و تر میں
ملتی۔۔۔۔


milti he nahi koi misaal aise dahar may
be goro kafan bhai hamsheer safar may

haq fatima zahra ka ghasab jisne kiya hai
wo dost bhala kya hai payambar ki nazar may
milti....

che maah ke bache ko bhi naize pe chadaya
kya choda hai umaat ne mere bhai ke ghar may
milti....

khamosh chali jaaun bhala shaam may kaise
shabbir ka laasha hai meri raah guzar may
milti....

abid ne kaha khoon yuheen rota rahunga
phuphi ki aseeri ne kiye zaqm jigar may
milti....

karti thi qawateen mulaaqaat ko jisme
zainab sare uryaan hai usi koofa shehar may
milti....

behte hai ghame shah may jo aansu wo kahaan hai
mehshar may milenge wo tumhe laal o gohar may
milti....

sunkar ameer aaj shahe gham ka ye nowha
har zulm ka manzar hai meri dida o tar may
milti....
Noha - Milti Hi Nahi Koi
Shayar: Ameer
Nohaqan: Hasan Sadiq
Download Mp3
Listen Online