بانو یہ عابد کو بتلا رہی ہے
میری سکینہ کو نیند آ رہی ہے

کہدو ہوائوں سے آہستہ آئیں
کہدو پرندوں سے غُل نہ مچائیں
کہدو اندھیروں سے واپس نہ جائیں
جاگی ہوئی چین کچھ پا رہی ہے
میری سکینہ کو نیند ۔۔۔۔۔

شاید رسن کی اذیت ہوئی کم
مدہم کرو بیبیو شورِ ماتم
سجاد زنجیر بولیں نہ اس دم
شاید غموں کی گھڑی جا رہی ہے
میری سکینہ کو نیند ۔۔۔۔۔

زندان کا در اب زور سے نہ کھولو
اے پہرہ دارو اب آہستہ بولو
تم بھی تو جاگے ہو کچھ دیر سو لو
بابا کی خوشبو اسے آ رہی ہے
میری سکینہ کو نیند ۔۔۔۔۔

کے اب دھڑکنِ دل بھی اس پہ گراں ہے﴾
نہ بھائی ہے نزدیک نہ اس کے ماں ہے
کانوں سے خون گو کےاب بھی رواں ہے
مگر آنکھ بوجھل یہ سمجھا رہی ہے
میری سکینہ کو نیند ۔۔۔۔۔

یہ شامِ غریباں کی جاگی ہوئی ہے
تماچوں کے ڈر سے نہیں سو سکی ہے
ذرا اب گلے سے رسن جو کھُلی ہے
سکوں سے جو اب سانس لے پا رہی ہے
میری سکینہ کو نیند ۔۔۔۔۔

میں خوش ہوں کے سوئے گی میری دُلاری
میں قربان اس کے میں اب اس کے واری
بہت سہہ چُکی دُکھ یہ غازی کی پیاری
مگر نبض کچھ اور بتلا رہی ہے
میری سکینہ کو نیند ۔۔۔۔۔

مگر یہ ہوا کیا کے زندان رویا
بدن روح کے ساتھ بچی کا سویا
نہ جاگی وہ عابد نے شانہ ہلایا
اور اب ماں یہ کہتے بھی شرما رہی ہے
میری سکینہ کو نیند ۔۔۔۔۔

کہاں تک لکھوں گا میں ریحان نوحہ
کبھی شام جائوں تو دیکھوں وہ روضہ
جہاں قیدی بچی کا مرقد ہے تنہا
جہاں ماں ابھی بھی کہے جا رہی ہے
میری سکینہ کو نیند ۔۔۔۔۔


bano ye abid ko batla rahi hai
meri sakina ko neend aa rahi hai

kehdo hawaon se aahista aayein
kehdo parindo se ghul na machayein
kehdo andheron se wapas na jayein
jaagi huvi chain kuch pa rahi hai
meri sakina ko neend....

shayad rasan ki aziyat hui kam
madham karo bibiyon shor-e-matam
sajjad zanjeer bolay na is dum
shayad ghamo ki ghadi ja rahi hai
meri sakina ko neend....

zindan ka dar ab zor se na kholo
ay pehradaro ab aahista bolo
tum bhi to jaage ho kuch dayr so lo
baba ki khusboo isay aa rahi hai
meri sakina ko neend....

ke ab dhadkane dil bhi ispe giron hai
na bhai hai nazdeek na iske maa hai
kano se khoon goke ab bhi rawan hai
magar aankh bojhal ye samjha rahi hai
meri sakina ko neend....

ye sham-e-ghariban ki jaagi hui hai
tamachon ke darr se nahi so saki hai
zara ab galay se rasan jo khuli hai
sukoon se jo ab saans le pa rahi hai
meri sakina ko neend....

main khush hoo ke soyegi meri dulaari
mai qurban is ke main aab is ke waari
bohat seh chuki dukh ye ghazi ki pyari
magar nafz kuch aur batla rahi hai
meri sakina ko neend....

magar ye hua kya ke zindan roya
badan rooh ke saath bachi ka soya
na jaagi wo abid ne shaana hilaaya
aur ab maa ye kehte bhi sharma rahi hai
meri sakina ko neend....

kahan tak likhoonga mai rehan noha
kabhi shaam jaaun to dekhun wo rauza
jahan qaidi bachi ka marqad hai tanha
jahan maa abhi bhi kahay ja rahi hai
meri sakina ko neend....
Noha - Meri Sakina Ko Neendh
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Syed Raza Abbas Zaidi
Download mp3
Listen Online