میت ہے سکینہ کی اندھیرا ہائے زندان
اللہ نہ دِکھلائے اب ایسا زندان

کُرتے کا کفن غسل دیا اشکوں سے جس کو
دفنا اُسے کیسے یہ سجاد سے پوچھو
خاموش ہوئی بچی تو روتا رہا زندان
میت ہے سکینہ کی ۔۔۔۔۔

اُڑتے ہوئے دیکھے جو پرندے کو پُکاری
اے طاہر و صغریٰ کو خبر دو یہ ہماری
تم خوش رہو صغریٰ میری قسمت میں تھا زندان
میت ہے سکینہ کی ۔۔۔۔۔

کانوں کا لہو چاند سے چہرے پہ جما تھا
خیموں میں لگی آگ جو دامن بھی جلا تھا
تنہائی میں بچی ڈستا رہا زندان
میت ہے سکینہ کی ۔۔۔۔۔

سہمی ہوئی رہتی تھی ستمگاروں کے ڈر سے
شکوے کیا کرتی تھی فقد باپ کے سر سے
لکھا گیا قسمت میں یہ کیسا زندان
میت ہے سکینہ کی ۔۔۔۔۔

اب خاک پہ سوتی ہوں نہ تکیہ ہے نہ بستر
رکھتا نہیں اک شمع کوئی اب تو جلا کر
جینے نہیں دیتا ہے اے بابا زندان
میت ہے سکینہ کی ۔۔۔۔۔
_________________________________
کہتی تھی پھُوپھی قید سے کب ہو گی رہائی
اما ں میرے عموں کی خبر کیوں نہیں آئی
ٹکڑے کیئے دیتا ہے کلیجہ میرا زندان
________________________________

سر باپ کا پایا تو وہ پھر اس طرح سوئی
پھر روئی نہیں اُس کے لیے موت تھی روئی
رہا سجاد کو پُرسہ صدا زنداندیتا
میت ہے سکینہ کی ۔۔۔۔۔

ماں کہتی رہی آئو اُٹھو نیند سے جاگو
آزاد ہوئی قید سے میں جاتی ہوں گھر کو
ملنے چلو صغریٰ سے کے اب کھُل گیا زندان
میت ہے سکینہ کی ۔۔۔۔۔

گھر جانے کا ارماں تھا سکینہ کو جو ریحان
مر کے بھی نہ پورا ہوا اُس بچی کا ارمان
معصوم سکینہ کا مرقد بنا زندان
میت ہے سکینہ کی ۔۔۔۔۔


mayyat hai sakina ki andhera haaye zindaan
allah na dikhlaye ab aisa koi zindaan

kurte ka kafan ghusl diya ashkon se jisko
dafnaya usay kaise ye sajjad se poocho
khamosh hui bachi to rota raha zindaan
mayyat hai sakina ki....

udte huwe dekhe jo parinde ko pukari
ay taahir-o-sughra ko khabar do ye hamari
tum khush raho sughra mere kismat may tha zindaan
mayyat hai sakina ki....

kano ka lahoo chand se chehre pe jama tha
qaimo may lagi aagj to daaman bhi jala tha
tanhaai may bachi ko dasta raha zindaan
mayyat hai sakina ki....

sehmi hui rehti thi sitamgaaro ke dar se
shikwe kiya karti thi fakhad baap ke sar se
likha gaya kismat may ye kaisa zindaan
mayyat hai sakina ki....

ab khaakh pe soti hoo na takiya hai na bistar
rakta nahi ek shamma koi ab to jalakar
jeene nahi deta hai ay baba zindaan
mayyat hai sakina ki....

_________________________________
kehti thi phuphi qaid se kab hogi rehaai
amma mere ammu ki khabar kyon nahi aayi
tukde kiye deta hai kaleja mera zindaan
________________________________

sar baap ka paaya to wo phir is tarha soyi
phir royi nahi uske liye maut thi royi
deta raha sajjad ko pursa sada zindaan
mayyat hai sakina ki....

maa kehti rahi aao utho neend se jaago
azaad hui qaid se mai jaati hoo ghar ko
milne chalo sughra se ke ab khul gaya zindaan
mayyat hai sakina ki....

ghar jaane ka armaan tha sakina ko jo rehaan
marke bhi na pura hua us bachi ka armaan
masoom sakina ka markhad bana zindaan
mayyat hai sakina ki....
Noha - Mayyat Hai Sakina Ki
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Nasir Zaidi
Download Mp3
Listen Online