موجوں میں طلاطم ہے اور شور ہے محشر کا
اندازہ ہے دریا کو عباس کے تیور کا

دشمن کے لیے تجھ میں جو غیض و غضب دیکھا
کیونکر نہ جلال آئے وارث ہے تُو حیدر کا
انداز ہ ہے ۔۔۔۔۔
موجوں میں ۔۔۔۔۔

ہتھیار میں غازی کے بس پاس ہے اک نیزہ
ہر فرد ہے کیوں لرزہ پھر شام کے لشکر کا
انداز ہ ہے ۔۔۔۔۔
موجوں میں ۔۔۔۔۔

مشکیزے میں دریا کو اب عمّوں لے آئیں گے
رِہ جائے بھرم باقی یہ دُخترِ سرور کا
انداز ہ ہے ۔۔۔۔۔
موجوں میں ۔۔۔۔۔

کس یاس سے اے زینب تُو بھائی کو تکتی ہے
تنہا وہ محافظ ہو جیسے تیری چادر کا
انداز ہ ہے ۔۔۔۔۔
موجوں میں ۔۔۔۔۔

رہوار سے مقتل بے دست گِرا کیسے
کس طرح تصور ہو ایسے کسی منظر کا
انداز ہ ہے ۔۔۔۔۔
موجوں میں ۔۔۔۔۔

شاہد میرے گھر ہو گی تا حشر عزاداری
گھر پر علم میرے عباسِ دلاور کا
انداز ہ ہے ۔۔۔۔۔
موجوں میں ۔۔۔۔۔


maujon may talatum hai uar shor hai mehshar ka
andaza hai darya ko abbas ke tevyar ka

dushman ke liye tujhme jo ghaiz-o-ghazab dekha
kyunkar na jalaal aaye waaris hai tu hyder ka
andaza hai....
maujon may....

hathyaar may ghazi ke bas paas hai ek naiza
har fard hai kyun larza phir sham ke lashkar ka
andaza hai....
maujon may....

mashkeeze may darya ko ab ammu le aayenge
rehjaye bharam baakhi ye dukhtare sarwar ka
andaza hai....
maujon may....

kis yaas se ay zainab tu bhai ko takti hai
tanha wo muhafiz ho jaise teri chadar ka
andaza hai....
maujon may....

rehwaar se maqtal be-dast gira kaise
kis tarha tasavvur ho aise kisi manzar ka
andaza hai....
maujon may....

shahid mere ghar hogi ta-hashr azadari
ghar par alam mere abbas-e-dilawar ka
andaza hai....
maujon may....
Noha - Maujon May Talatum
Shayar: Shahid Jafer
Nohaqan: Ali Haider
Download Mp3
Listen Online