مت کر ہمیں قبول اے نانا کے مدینے

مدینہ آ گیا جب سے صدا اُبھرنے لگی
یہ پُشتِ ناقہ سے کلثوم بین کرنے لگی
لُٹا کے آئے ہیں زہرا کے ہم گھرانے کو
نہ کر قبول مدینے ہمارے آنے کو

بتائیں کیسے جوہم پر گزرگیا محشر
سرِ حسین تڑپتا تھا نوکِ نیزہ پر
ہر ایک شہر میں مارے گئے ہمیں پتھر
ہمارے چہروں کی جانب تھی شامیوں کی نظر
نہ ہاتھ بھی تھے یہ آزاد منہ چھپانے کو
نہ کر قبول۔۔۔

بچھڑ کے اپنی بہن سے دوبارہ مل نہ سکی
وہ دل میں لے گئی حسرت مدینے آنے کی
مصیبتوںکے اندھیروں میں چل بسی بچی
ہمیں رہائی ملی وہ ہے آج بھی قیدی
بسا لیا ہے سکینہ نے قید خانے کو
نہ کر قبول۔۔۔

مدینہ لٹ گئی سرکار تیرے والی کی
میرے حسین کے سوکھے گلے پہ تیغ چلی
بچا نہ عابدِ بیمار کے سوا کوئی
ہماری گودیاں پردیس میں ہوئیں خالی
قدم اُٹھائے نہیں جاتے گھر میں آنے کو
نہ کر قبول۔۔۔

گلی گلی میں پھرایا گیا غریبوں کو
قد م قدم پہ رولایا گیا غریبوں کو
بچھاکہ کانٹے چلایا گیا غریبوں کو
تماش بینوں میں لایاگیا غریبوں کو
ثواب سمجھا گیا ہے ہمیں ستانے کو
نہ کر قبول۔۔۔

طرح طرح سے ستمگار ہمیں سزا دیتے
وہ تازیانوں کے بیمار کو دوا دیتے
اُٹھا کے سائے سے وہ دھوپ میں بٹھادیتے
غریب زہرا کا پرسہ بھلا وہ دیتے
نہ آیا کوئی ردا بھی ہمیں اُڑھانے کو
نہ کر قبول۔۔۔

نہ لکھ سکے گا تکلم سمائ وہ تیرا قلم
تھے گرد اہلِ مدینہ عجیب تھا عا لم
یہ کہہ کہ ناقے سے اُترے سیاہ پوش اہلِ حرم
یہاں پہ چین سے ہوگا حسین کا ماتم
ترس گئے تھے ہم اشکِ عزائ بہانے کو
نہ کر قبول۔۔۔


mat kar hamay qubool ay nana ke madine

madina aagaya jab ye sada ubharne lagi
ye pushte naaqa se kulsoom bain karne lagi
luta ke aaye hai zehra ke hum gharane ko
na kar qubool madine hamare aane ko

batayein kaise jo hum par guzar gaya mehshar
sare hussain tadapta tha noke naiza par
har ek shehr may maare gaye hamay pathar
hamare chehro ki jaanib thi shaamiyo ki nazar
na haath bhi thay ye azaad moo chupane ko
na kar qubool...

bichad ke apni behan se dubaara mil na saki
wo dil may le gayi hasrat madine aane ki
musibaton ke andheron may chal basi bachi
hamay rehaai mili wo hai aaj bhi qaidi
basa liya hai sakina ne qaid khane ko
na kar qubool...

madina lutgayi sarkar tere waali ki
mere hussain ke sookhe galay pe taygh chali
bacha na abid e bemaar ke siwa koi
hamari godhiyan pardes may hui khaali
qadam uthaye nahi jaate ghar may aane ko
na kar qubool...

gali gali may phiraya gaya ghareebon ko
qadam qadam pe rulaaya gaya ghareebon ko
bicha ke kaante chalaya gaya ghareebon ko
tamash beeno may laaya gaya ghareebon ko
sawaab samjha gaya hai hamay satanay ko
na kar qubool...

tarha tarha se sitamgar hamay saza dete
wo taaziyon ki bemaar ko dawa dete
utha ke saaye se wo dhoop may bitha dete
ghareeb e zehra ka pursa bhala wo kya dete
na aaya koi rida bhi hamay udhane ko
na kar qubool...

na likh sakega takallum sama wo tera qalam
thay gird ahle madina ajeeb tha aalam
ye kehke naaqe se uthre siyaah posh ahle haram
yahan pe chain se hoga ussain ka matam
taras gaye thay hum ashke aza bahane ko
na kar qubool...
Noha - Mat Kar Hamay Qubool
Shayar: Mir Takallum
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online