معصوم سکینہ پیاسی ہے

یہ سوکھے ہوئے لب خشک زباں
بے تاب اتش سے ننھنی سی جاں
معصوم سکینہ پیاسی ہے

یہ تشنہ لبی یہ جلتی زمین
پانی کا کوئی امکان نہیں
نازک سے جگر سے اٹھتا دھواں
معصوم سکینہ پیاسی ہے

بچی کی صدا پانی پانی
آنکھوں میں حرم کی ویرانی
مضطر ہے پھوپھی بے تاک ہے ماں
معصوم سکینہ پیاسی ہے

کیا کوزہ گر کر ٹوٹ گیا
یا آس کا دامن چھوٹ گیا
کیا اب نہ چاچا آئیں گے یہاں
معصوم سکینہ پیاسی ہے

اے پتھر دل بہتے دریا
تجھ کو بھی ترس آیا نہ ذرا
کس کام کا تیرا اب رہا
معصوم سکینہ پیاسی ہے

عباس تھے اتنے شرمندہ
ساحل پہ یہ کہہ کر دم توڑا
کس منہ سے بھلا میں جائوں وہاں
معصوم سکینہ پیاسی ہے

لکھوں بھی تو کیا لکھوں اختر
لرزہ ہے قلم پانی میں جگر
نوحہ ہے میرا یہ اشک رواں
معصوم سکینہ پیاسی ہے


masoom sakina pyasi hai

ye sukhe hue kab pushq zuban
betabatash se nanhi si jaan
masoom sakina....

ye tashnalabi ye jalti zameen
pani ka koi imkaan nahi
nazuk se jigar se uth-ta dhuan
masoom sakina....

bachi ki sada pani pani
aankhon may harram ki veerani
muztar hai phuphi betaab hai maa
masoom sakina....

kya kooza gir kar toot gaya
ya aas ka daaman choot gaya
kya ab na chacha aayenge yahan
masoom sakina....

ay pathar dil behte darya
tujhko bhi taras aaya na zara
kis kaam ka tera aab raha
masoom sakina....

abbas thay itne sharminda
saahil pa ye kehke dam toda
kis moo se bhala mai jaaun wahan
masoom sakina....

likhun bhi to kya likhun akhtar
larza hai khalam pani hai jigar
nohay hai mere ye ashqe rawan
masoom sakina....
Noha - Masoom Sakina Pyasi
Shayar: Akhtar
Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online