مشکیزئہ سکینہ کہتا ہے علقمہ سے
خیموں میں تشنگی ہے اصغر بہت ہیں پیاسے
مشکیزئہ سکینہ ۔۔۔۔۔

سوکھے ہوئے لبوں پر لکھی ہے یہ کہانی
ہے آلِ مصطفیٰ پر ہفتم سے بندھ پانی
اے کاش روک دیتا کوئی تیری روانی
آوازِ العتش ہے ہر سمت ہر فضا سے
مشکیزئہ سکینہ ۔۔۔۔۔

ہر کشتِ آرزو کو بے آب کر گئی ہے
اہلِ حرم میں سب کو بیتاب کر گئی ہے
اکبر کے خون سے برچھی سیراب کر گئی ہے
گھر کے چراغ اب بجھنے لگے ہوا سے
مشکیزئہ سکینہ ۔۔۔۔۔        

حسرت سے تک رہا ہے بے دست اپنے بازو
رکھے تو کیسے رکھے جذبات پر وہ قابو
چہرے پہ بہہ رہے ہیں چشمِ جری پہ آنسُو
وابستہ سب اُمیدیں بچی کی ہیں چچا سے
مشکیزئہ سکینہ ۔۔۔۔۔

عرشِ بریں ہے لرزا انسانیت ہے گُم سُم
روکا گیا کچھ ایسے شبیر کا تکلم
ہچکی کے ساتھ اُبھرا پھر خوں بھرا تبسم
غنچہ جھُلس گیا ہے پیکانِ حرملا سے
مشکیزئہ سکینہ ۔۔۔۔۔

شاہد ہے غم کا منظر وہ شدتِ عتش ہے
تڑپیں گے کیسے سرور وہ شدتِ عتش ہے
رُکنے لگا ہے خنجر وہ شدتِ عتش ہے
شرمندہ تشنگی ہے مظلومِ کربلا سے
مشکیزئہ سکینہ ۔۔۔۔۔


mashkeeza-e-sakina kehta hai alqama se
khaimo may tishnagi hai asghar bahot hai pyase
mashkeeza-e-sakina....

sookhe hue labon par likhi hai ye kahani
hai aale mustufa par haftum se bandh pani
ay kaash rok deta koi teri rawani
awaaze al-atash hai har samt har faza se
mashkeeza-e-sakina....

har kishte aarzo ko be-aab kargayi hai
ahle haram may sab ko betaab kar gayi hai
akbar ka khoon se barchi seraab kar gayi hai
ghar ke charagh ab bujhne lagay hawa se
mashkeeza-e-sakina....

hasrat se tak raha hai bedast apne baazu
rakhe to kaise rakhe jazbat par wo qaboo
chehre pe beh rahe hai chashme jari pe aansu
wabasta sab umeeday bachi ki hai chacha se
mashkeeza-e-sakina....

arshe bari hai larza insaniyat hai gumsum
roka gaya kuch aisay shabbir ka takallum
hichki ke saath ubhra phir khoon bhara tabasuum
ghuncha jhulas gaya hai paikane hurmula se
mashkeeza-e-sakina....

shahid hai gham ka manzar wo shiddate at-ash hai
tadpenge kaise sarwar wo shiddate at-ash hai
rukne laga hai khanjar wo shiddate at-ash hai
sharminda tishnagi hai mazloome karbala se
mashkeeza-e-sakina....
Noha - Mashkeeza e Sakina
Shayar: Shahid Jafer
Nohaqan: Master Kashif Raza