مقتل میں کھو گئی ہے اکبر کی جوانی
سوئی ہے سِناں کھا کہ پیعمبر کی نشانی

صغریٰ کو مدینہ میں عجب خواب یہ آیا
لُٹتے ہوئے دیکھی ہے برادر کی جوانی
مقتل میں کھو گئی ۔۔۔۔۔

ٹُکڑے علی اکبر کے کلیجے کے جو دیکھے
یاد آ گئی پھر موت کو شبر کی جوانی
مقتل میں کھو گئی ۔۔۔۔۔  

اٹھارہ برس کا تھا دن بیاہ کے آئے
تر خوں میں مگر ہو گئی اکبر کی جوانی
مقتل میں کھو گئی ۔۔۔۔۔

ریحان شاہِ والا کا دامن ہوا خالی
بچپن رہا اصغر کا نہ اکبر کی جوانی
مقتل میں کھو گئی ۔۔۔۔۔


maqtal may kho gayi hai akbar ki jawani
soyi hai sina khaake payambar ki nishani

sughra ko madina may ajab khaab yeh aaya
lut-tay huway dekhi hai biradar ki jawani
maqtal may kho gayi....

tukday ali akbar ke kalejay ke jo dekhe
yaad aagayi phir maut ko shabbar ki jawani
maqtal may kho gayi....

athara baras ka tha din byah ke aaye
tar khoon may magar hogayi akbar ki jawani
maqtal may kho gayi....

rehaan shah-e-wala ka daaman huwa khaali
bachpan raha asghar ka na akbar ki jawani
maqtal may kho gayi....
Noha - Maqtal May Khogayi
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Hasan Sadiq
Download Mp3
Listen Online