مقتل میں ڈھونڈتی ہے اصغر کو سکینہ
جھُولا بھی ملا خالی اصغر کا کہیں نہ
مقتل میں ڈھونڈتی ہے اصغر کو سکینہ

کیسے پیئوں میں پانی کہ پانی میں بھی تم ہو
تمہیں ڈھونڈوں کیسے اصغر کہاں ریت میں گُم ہو
تم سے بچھڑ کے بھیا نہیں بہن کو جینا
مقتل میں ڈھونڈتی ۔۔۔۔۔

چھوٹی سی قبر دیکھی معصومہ نے جس دم
بانہوں میں اُسے لے کر کرنے لگی ماتم
خالی قبر پڑی تھی اور گم تھا نگینہ
مقتل میں ڈھونڈتی ۔۔۔۔۔

خونِ جگر سے لکھوں وہ زورِ قلم دو
جُز غم علی اصغر کے کوئی اور نہ غم ہو
بڑھتا ہی رہے ہر دم اس غم کا خزینہ
مقتل میں ڈھونڈتی ۔۔۔۔۔

پلکوں پہ دُرے غم کو تم لوگو سجائو
ماتم کو تم وسیلہ بخشش کا بنائو
ہے مثلِ کشتیِ نوح پنجتن کا سفینہ
مقتل میں ڈھونڈتی ۔۔۔۔۔

جس طرح ظالموں نے نیزے میںپرویا
یہ دیکھ روئی دھرتی عمبر بھی تھا رویا
خورشید کو پھر بھولا منظر وہ کبھی نہ
مقتل میں ڈھونڈتی ۔۔۔۔۔


maqtal may dhoondti hai asghar ko sakina
jhoola bhi mila khaali asghar ka kahi naam
maqtal may dhoondti hai asghar ko sakina

kaise piyun mai pani ke pani may bhi tum ho
tumhe dhoondu kaise asghar kahan rayt may gum ho
tumse bichad ke bhaiya nahi behan ko jeena
maqtal may dhoondti....

choti si khabr dekhi masooma ne jis dum
bahon may usay lekar karne lagi matam
khaali khabr padi thi aur gum tha nageena
maqtal may dhoondti....

khoonay jigr se likhoon wo zoray kalam do
juz gham ali asghar ke koi aur na gham ho
badta hi rahay har dam is gham ka khazeena
maqtal may dhoondti....

palkon pe durray gham ko tum logo sajao
matam ko tum waseela bakshish ka banao
hai misle kashti-e-nuh panjatan ka safeena
maqtal may dhoondti....

jis tarah zaalimon ne naize may paroya
yeh dekh royi dharti ambar bhi tha roya
khursheed ko phir bhoola manzar woh kabhi na
maqtal may dhoondti....
Noha - Maqtal May Dhoondti

Nohaqan: Hasan Sadiq
Download Mp3
Listen Online