میں رہوں یا نہ رہوں
میرا اسلام رہے گا
میرا پیغام رہے گا

اے فوجِ اشقیائ میرا اسلام رہے گا
قرآن رہے گا میرا پیغام رہے گا
میں رہوں یا نہ۔۔۔۔۔

جب ظہر تک حسین بہتر کو رو چکے
اکبر کو رو چکے علی اصغر کو رو چکے
اک دوپہر میں با وفا لشکر کو رو چکے
پھر فوجِ بدنصیب سے مخاطب ہوئے امام
حجت تمام کرتا ہوں سُن لو میرا پیام
میں رہوں یا نہ۔۔۔۔۔

فرماتے تھے حسین کے میں بے قصور ہوں
روشن ہے تم پہ چشمِ پیامبر کا نور ہوں
فاقوں سے میں نڈھال ہوں
زخموں پہ زخم پیاس کی شدت میں کھائوں گا
لیکن میں نانا جان سے وعدہ نبھائوں گا
میں رہوں یا نہ۔۔۔۔۔

دریا کو تم نے چھین لیا میں نے کچھ کہا
پانی دیکھا دیکھا کے پیا میں نے کچھ کہا
داغ اکبرِجواں کا دیا میں نے کچھ کہا
حق پر ہوں میرے حق میں سناں بول رہی ہے
سُن لو وہ اذاں میری زباں بول رہی ہے
میں رہوں یا نہ۔۔۔۔۔

مقصد ہے لاالہ کی بقا اور کچھ نہیں
وعدہ ہو زیرِتیغ وفا اور کچھ نہیں
اس کے سوا لبو ںپہ دُعا اور کچھ نہیں
راضی ہو مجھ سے میرا خدا چاہتاہوں میں
میںہوں حسین سب کا بھلا چاہتا ہوںمیں
میں رہوں یا نہ۔۔۔۔۔

مقصد نہیں ہے جنگ ہمارا خدا گواہ
خط بھیج کے ہے تم نے بلایا خدا گواہ
بے جرم تم نے مجھ کو ستایا خدا گواہ
خنجر تلے بلند میں تکبیر کروں گا
اپنے لہو سے خاک پہ تحریر کروں گا
میں رہوں یا نہ۔۔۔۔۔

میں اور کروں یزید کی بیعت نہیں نہیں
بدلوں اجل کے ڈرسے شریعت نہیں نہیں
جینے کے بدلے چھوڑوں شہادت نہیں نہیں
تم کون ہو نقاب رُخوں سے ہٹائوں گا
میں کون ہوں یہ نوکِ سناں پر بتائوں گا
میں رہوں یا نہ۔۔۔۔۔

آکر درِ خیام پہ زینب کو دی صدا
آ اے میری غریب بہن آ قریب آ
لے آخری سلام حسینِ غریب کا
مقصد ہے میرا کیا یہ سبق تجھ کو یاد ہے
میری شریکِ کار مجھے اعتماد ہے
میں رہوں یا نہ۔۔۔۔۔

زینب تڑپ کے بولی کہ بھیا سمجھ گئی
بھیا تیرے اشارے کو بہنا سمجھ گئی
میں کیا تیری غریب سکینہ سمجھ گئی
خطبوں سے میں ہلائوں گی قصرِ یزید کو
مرنے نہ دوں گی اب میں کسی بھی شہید کو
میں رہوں یا نہ۔۔۔۔۔

اُٹھا غبارِ ظلم کھڑکتی ہیں بجلیاں
ذیں سے گرے حسین اُٹھی سرخ آندھیاں
ناگاہ سر حسین کا آیا سرِ سناں
قرآں سنا کے سیدِ مظلوم نے کہا
لو نانا جان وعدہ وفا میں نے کر دیا
میں رہوں یا نہ۔۔۔۔۔

اے سرور و ریحان یہ لمحہ عجیب ہے
نیزے پہ لب کشائ یہ حسینِ غریب ہے
زینب تمہاری شامِ غریباں قریب ہے
سب کچھ تیرے حوالے ہے اب تم سنبھالنا
اپنا خیال رکھنا سکینہ کو پالنا
میں رہوں یا نہ۔۔۔۔۔


mai rahoo ya na rahoo
mera islam rahega
mera paigham rahega

ay fauje ashqiyan mera islam rahega
quran rahega mera paigham rahega
mai rahoo ya na....

jab zohr tak hussain bahattar ko ro chuke
akbar ko ro chuke ali asghar ko ro chuke
ek dopahar may ba-wafa lashkar ko ro chuke
phir fauje bad nasab se muqatib huve imam
hujjat tamam karta hoo sunlo mera payam
mai rahoo ya na....

farmate thay hussain ke mai be-kasoor hoo
raushan hai tumpe chashme payambar ka noor hoo
faqon se mai nidhaal hoo zakhmo se choor hoo
zakhmo pe zakhm pyaas ki shiddat mai khaunga
lekin mai nana jaan se wada nibhaunga
mai rahoo ya na....

darya ko tum ne chheen liya maine kuch kaha
pani dikha dikha ke piya maine kuch kaha
daagh akbar e jawan ka diya maine kuch kaha
haq par hoo mere haq may sina bol rahi hai
sunlo who azan meri zuban bol rahi hi
mai rahoo ya na....

maqsad hai la-ilaah ki baqa aur kuch nahi
wada ho zere taygh wafa aur kuch nahi
iske siwa labon pe dua aur kuch nahi
raazi ho mujhse mera khuda chaahta hun mai
mai hoo hussain sab ka bhala chaahta hun mai
mai rahoo ya na....

maqsad nahin hai jang hamara khuda gawah
khat bhej ke he tumne bulaya khuda gawah
be jurm tumne mujhko sataya khuda gawah
khanjar talay baland mai takbeer karunga
apne lahoo se khaak pe tehreer karunga
mai rahoo ya na....

mai aur karoo yazeed ki bayyat nahi nahi
badhloo ajal ke dar se shariyat nahi nahi
jeene ke badle chodun shahadat nahi nahi
tum kaun ho naqab rukhon se hataunga
mai kaun hoo ye noke sina par bataunga
mai rahoo ya na....

aakar dare qayaam pe zainab ko di sada
aa ay meri ghareeb behan aa khareeb aa
le aakhri saalam hussain e ghareeb ka
maqsad hai mera kya ye sabaq tujhko yaad hai
meri shareeke kaar mujhe ehtemaad hai
mai rahoo ya na....

zainab tadap ke boli ke bhaiya samajh gayi
bhaiya tere ishare ko behna samajh gayi
mai kya teri ghareeb sakina samajh gayi
khutbon se mai hilaungi qasre yazeed ko
marne na doongi ab mai kisi bhi shaheed ko
mai rahoo ya na....

uth-tha ghubar e zulm kadakti hai bijliyan
zeen se giray hussain uthi surkh aandhiya
nagaah sar hussain ka aaya sare sina
quran suna ke sayyade mazloom ne kaha
lo nana jaan wada wafa maine kar diya
mai rahoo ya na....

ay sarwar o rehan ye lamha ajeeb hai
naize pe lab kusha ye hussain e ghareeb hai
zainab tumhari sham e gharibaan kareeb hai
sab kuch tere hawale hai ab tum sambhaalna
apna khayaal rakhna sakina ko paalna
mai rahoo ya na....
Noha - Mai Rahoo Ya Na Rahoo
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online