جب خیمے میں رخصت کو شاہِ بحر و بر آئے
چلائی سکینہ میرے بے کس پدر آئے
شہہ کہتے تھے بی بی ہمیں رو کر نہ رُلائو
پھر پیار کریں ہم تمہیں منہ آگے کو لائو
وہ کہتی تھی ہمراہ مجھے لے کے تو جائو
میں کیا کروں میدان میں گر جا کے نہ آئو
نیند آئے گی جب آپ کی بُو پائوں گی بابا
میں رات کو مقتل میں چلی آئوں گی بابا

فرمایا نکلتی نہیں سیدانیاں باہر
سینے پہ سُلائیں گی تمہیں رات میں مادر
کیوں کہتی ہو مقتل میں چلی آئوں گی بابا
میں رات کو مقتل میں ۔۔۔

ننھے سے کلیجے پہ میرے چلتی ہے تلوار
کھلتا نہیں کیوں آپ نے باندھے ہیں یہ ہتھیار
میں آپ کو کھو کر نہ کبھی پائوں گی بابا
میں رات کو مقتل میں ۔۔۔

آتی ہے بلا سر پہ تو پہلے مجھے وارو
مر جائوں گی بابا نہ سدھارو نہ سدھارو
جائو گے جہاں میں بھی وہیں جائوں گی بابا
میں رات کو مقتل میں ۔۔۔

شب ہو گی تو پھر خاک پہ سوئیں گے کہاں آپ
سینے پہ تو اصغر کو سُلائیں گے وہاں آپ
اچھا میں وہیں خاک پہ سو جائوں گی بابا
میں رات کو مقتل میں ۔۔۔

آنے دو اگر پیاس سے غش آئے گا بابا
تم جیتے رہو پانی بھی مل جائے گا بابا
میں آپ کو دیکھوں گی تو جی جائوں گی بابا
میں رات کو مقتل میں ۔۔۔

کچھ دُور نہ تھے ہم کے تمہیں نیند نہ آئے
کیا ہووے گا جب ہو گی مہینوں کی جُدائی
بی بی نہ کہو میں نہیں سو پائوں گی بابا
میں رات کو مقتل میں ۔۔۔

وہ حال انیس اب نہیں ہو سکتا ہے مرقوم
جس طرح چھُٹی باپ سے وہ دُخترِ مظلوم
نوحہ تھا یہی جس کا نہ جی پائوں گی بابا
میں رات کو مقتل میں ۔۔۔


jab qaime may ruqsat ko shah-e-bahrobar aaye
chillayi sakina mere bekas padar aaye
sheh kehte thay bibi hamay ro kar na rulao
phir pyar kare hum tumhe moo aage ko lao
wo kehti thi humraah mujhe le ke to jao
mai kya karoon maidan may gar jaa ke na aao
neend aayegi jab aap ki bu paaungi baba
mai raat ko maqtal may chali aaungi baba

farmaya nikalti nahi saydaniya baahar
seene pe sulayegi tumhe raat may madar
kyun kehti ho maqtal may chali aaungi baba
mai raat ko maqtal....

nanhe se kaleje pe mere chalti hai talwaar
khulta nahi kyun aap ne baandhe hai ye hathyar
mai aapko kho kar na kabi paaungi baba
mai raat ko maqtal....

aati hai bala sar pe to pehle mujhe varo
mar jaungi baba na sidharo na sidharo
jaoge jahan mai bhi wahin jaungi baba
mai raat ko maqtal....

shab hogi to phir khaak pe soyenge kahan aap
seene pe to asghar ko sulayenge wahan aap
acha mai wahin khakh pe so jaungi baba
mai raat ko maqtal....

aane do agar pyaas se ghash aayega baba
tum jeetay raho pani bhi mil jayega baba
mai aap ko dekhungi to jee jaungi baba
mai raat ko maqtal....

kuch door na thay hum ke tumhe neend na aayi
kya hovega jab hogi mahino ki judaai
bibi na kaho mai nahi so paungi baba
mai raat ko maqtal....

wo haal anees ab nahi ho sakta hai marqoom
jis tarha chuti baap se wo dukhtare mazloom
nawha tha yehi jis ka na jee paungi baba
mai raat ko maqtal....
Noha - Mai Raat Ko Maqtal
Shayar: Anees
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online