میں راہِ شام سے گزری ہوں بے ردا بابا
اسیرِ ظلم ہوں روتی ہوں بے ردا بابا

تھا بے کفن تیرا اسلام میں ردا دے کر
بلا کے دشت میں آئی ہوں بے ردا بابا
میں راہِ شام سے ۔۔۔۔۔

ستم گاروں نے جگایا ہے تعزیانوں سے
جو تھک کے راہ میں سوتی ہوں بے ردا بابا
میں راہِ شام سے ۔۔۔۔۔

عدو جو دُرے لگاتے ہیں میرے عابد کو
میں دل کو تھام کے روتی ہوں بے ردابابا
میں راہِ شام سے ۔۔۔۔۔

لہو بہاتا ہے آنکھوں سے عابدِ مضطر
میں جب بھی کانٹوں پہ چلتی ہوں بے ردا بابا
میں راہِ شام سے ۔۔۔۔۔

سفر کی خاک نے بالوں کا کر لیا پردہ
میں اس کے بعد بھی بیٹھی ہوں بے ردا بابا
میں راہِ شام سے ۔۔۔۔۔

بچھڑنے والوں کے ماتم میں رات دن گزرے
ہر اک نام پہ تڑپی ہوں بے ردا بابا
میں راہِ شام سے ۔۔۔۔۔

میری اسیری پہ مظہر نے جو لکھا نوحہ
ہر اک لفظ پہ تڑپی ہوں بے ردا بابا
میں راہِ شام سے ۔۔۔۔۔


mai raah-e-shaam se guzri hoo berida baba
aseeray zulm hoo roti hoo berida baba

tha be-kafan tera islam mai rida dekar
bala ke dasht may aayi hoo berida baba
mai raah-e-shaam se....

sitam garon nay jagaya hai taaziyano say
jo thak ke raah may soti hoo berida baba
mai raah-e-shaam se....

adoo jo durray lagatay hai mere abid ko
mai dil ko thaam ke roti hoo berida baba
mai raah-e-shaam se....

lahoo bahaata hai aankhon say abid-e-muztar
mai jab bhi kanton pay chalti hoo berida baba
mai raah-e-shaam se....

safar ki khaakh ne baalo ka karliya parda
mai iskay baad bhi baithi hoo berida baba
mai raah-e-shaam se....

bichadnay walon kay matam may raat din guzray
har ek naam pe tadpi hoo berida baba
mai raah-e-shaam se....

meri aseeri pay mazhar nay jo likha nowha
har ek lafz pe tadpi hoo berida baba
mai raah-e-shaam se....
Noha - Mai Raahe Sham Se

Shayar: Mazhar