جب خاتمہ بخیر ہوا فوجِ شاہ کا
کوثر پہ قافلہ گیا پیاسی سپاہ کا
گھر لُوٹا گیا جنابِ رسالت پناہ کا
خاک اُڑ رہی تھی حال تھا یہ بارگاہ کا
ہائے مقتل میں آئیں فاطمہ زہرا برہنہ سر
چلائیں زیرِ تیغ ہے بابا میرا جگر
انیس سو ہیں زخم تنِ چاک چاک پر
زینب نکل حسین تڑپتا ہے خاک پر
ہائے پہنچی بہن جو بھائی کے مقتل میں نوحہ گر
دیکھا سرِ حسین ہے نیزے کی نوک پر
صدقے گئی لُٹا گئے گھر وعدہ گاہ میں
ہائے جنبش لبوں کو ہے ابھی ذکرِ الہ میں

میرا وعدہ ہوا پورا نانا
میں نوکِ سناں پر ہوں
میرا وعدہ ہوا پورا نانا

نانا دیکھو نواسا کہاں آ گیا
میں نے کرب و بلا کو مُعلیٰ کیا
خون میرا آج خاکِ شفائ بن گیا
میں نے بچپن کا وعدہ وفا کر دیا
میرا وعدہ ہوا پورا
میں نوکِ سناں پر ۔۔۔

میرا گھر میرے بچے میری زندگی
آپ کے دین پہ سب میں نے قرباں کی
میرے ماتھے پہ وہ تھا دو اب آخری
برسرِ نوکِ نیزہ سواری چلی
میرا وعدہ ہوا پورا
میں نوکِ سناں پر ۔۔۔

دین و قرآں بچے تیرا کعبہ بچا
تا قیامت رہے گی اذاں کی صدا
مدرسہ بن گئی آج سے کربلا
ہائے نانا مگر میرا گھر نہ رہا
میرا وعدہ ہوا پورا
میں نوکِ سناں پر ۔۔۔

چکیاں پیسنے والی ماں کی قسم
میری آغوش میں توڑا اکبر نے دم
کیسے لاشِ جواں لایا سوئے حرم
اپنے وعدے پہ سہتا رہا غم پہ غم
میرا وعدہ ہوا پورا
میں نوکِ سناں پر ۔۔۔

کتنے لاشے اُٹھائے ہیں اک روز میں
کتنے آنسُو بہائے ہیں اک روز میں
سینکڑوں تیر کھائے ہیں اک روز میں
سارے وعدے نبھائے ہیں اک روز میں
میرا وعدہ ہوا پورا
میں نوکِ سناں پر ۔۔۔

بھائی بتیس برسوں سے جو ساتھ تھا
میں نے وعدہ نبھانے میں وہ کھو دیا
کھا گئی اُس کے شانوں کو یہ علقمہ
وہ گیا اور دردِ کمر دے گیا
میرا وعدہ ہوا پورا
میں نوکِ سناں پر ۔۔۔

میرا نانا یہ دُلہا یہ کمسن جواں
ایسے روندا گیا دشت میں الاماں
اپنے بیٹے کو پہچان پائی نہ ماں
اُس کی دُلہن نے خود توڑ دیں چوڑیاں
میرا وعدہ ہوا پورا
میں نوکِ سناں پر ۔۔۔

ہاں وہ اصغر جو صغرا کی تھی زندگی
جس کی خاطر وہ بیمار بچی میری
چھوٹے چھوٹے سے کُرتے جو سیتی رہی
اُسکا خوں اپنے چہرے پہ مل کے ابھی
میرا وعدہ ہوا پورا
میں نوکِ سناں پر ۔۔۔

میرے نانا سکینہ کا غم دیکھیئے
عمر اتنی سی اتنے ستم دیکھیئے
جلتی ریتی پہ اُس کے قدم دیکھیئے
کتنے مجبور ہیں آج ہم دیکھیئے
میرا وعدہ ہوا پورا
میں نوکِ سناں پر ۔۔۔

شام ریحان و سرور جو ڈھلنے لگی
سر سے شبیر کے یہ صداآتی تھی
اے بہن اب یہاں سے قیادت تیری
میرے وعدے کی خاطر ضروری ہوئی
میرا وعدہ ہوا پورا
میں نوکِ سناں پر ۔۔۔


jab khatima ba qair huwa fauje shah ka
kausar pe qaafila gaya pyasi sipaah ka
ghar luta gaya janab-e-risalat panaah ka
khaak ud rahi thi haal ka ye bargaah ka
haye maqtal may aayi fatima zehra ba-rehna sar
chillayi zere taygh hai baba mera jigar
unees sau hei zakhm tan-e-chak chak par
zainab nikal hussain tadapta hai khaak par
haye pahunchi behan jo bhai ke maqtal may nawhaghar
sekha sar-e-hussain hai naize ki nok par
sadqe gayi luta gaye ghar wada-gaah may
haye jumbish labon ko hai abhi zikre ilaah may

mera wada huwa pura nana
mai noke sina par hoo
mera wada huwa pura nana

nana dekho nawasa kahan aagaya
maine karbobala ko muallah kiya
khoon mera aaj khaak-e-shifa ban gaya
maine bachpan ka wada wafa kar diya
mera wada huwa pura
mai noke sina par....

mera ghar mere bache meri zindagi
aap ke deen pe sab maine qurban ki
mere maathe pe wo tha do ab aakhri
bar sare noke naiza sawari chali
mera wada huwa pura
mai noke sina par....

deeno quran bache tera kaaba bacha
ta qayamat rahegi azan ki sada
madressa ban gayi aaj se karbala
haye nana magar mera ghar na raha
mera wada huwa pura
mai noke sina par....

chakkiyan peesne wali maa ki qasam
meri aaghosh may toda akbar ne dam
kaise laashe jawan laaya suye haram
apne wade pe sehta raha gham pe gham
mera wada huwa pura
mai noke sina par....

kitne laashe uthaaye hai ek roz may
kitne aansu bahaye hai ek roz may
saikdo teer khaye hai ek roz may
saare waade nibhaye hai ek roz may
mera wada huwa pura
mai noke sina par....

bhai bat-tees barson se jo saath tha
maine wada nibhaane may wo khodiya
khagayi uske shano ko ye alqama
wo gaya aur darde kamar degaya
mera wada huwa pura
mai noke sina par....

mere nana ye dulha ye kamsin jawan
aise raunda gaya dasht may al amaan
apne bete ko pehchan paayi na maa
uski dulhan ne khud tod-di churiyan
mera wada huwa pura
mai noke sina par....

han wo asghar jo sughra ki thi zindagi
jis ki khaatir wo bemaar bachi meri
chote chote se kurte jo seeti rahi
uska khoon apne chehre pe malke abhi
mera wada huwa pura
mai noke sina par....

mere nana sakina ka gham dekhiye
umr itni si itne sitam dekhiye
jalti reti pe uske qadam dekhiye
kitne majboor hai aaj hum dekhiye
mera wada huwa pura
mai noke sina par....

shaam rehan o sarwar jo dhalne lagi
sar se shabbir ke ye sada aati thi
ay behen ab yahan se qayadat teri
mere waade ki khaatir zuroori huwi
mera wada huwa pura
mai noke sina par....
Noha - Mai Noke Sina Par
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online