زینب نے کہا رو کے مصیبت کا ہے لمحہ
میں کیا کروں بابا میں کیا کروں بابا

ماں ڈھونڈتی ہے قاسم مضطر نہیں ملتا
ڈھونڈا ہے بہت آنکھوں نے اکبر نہیں ملتا
آغوش ہے خالی علی اصغر نہیں ملتا
دوں کیسے مصیبت میں ہر اک ماں کو دلاسہ
میں کیا کروں بابا میں کیا کروں بابا

عباس گئے جب سے سہارا نہیں کوئی
نیزے کی انی سے میری چادر گئی چھینی
میں کیا کروں میری چادریں دلوا نہیں سکتا
ہر ماں یہی کہتی ہے کہ ہائے میرا پردہ
میں کیا کروں بابا میں کیا کروں بابا

نیزوں پہ ہیں سر خون میں تر دیکھ رہی ہوں
بیوئوں یتیموں کا سفر دیکھ رہی ہوں
دیکھا نہیں جاتا ہے مگر دیکھ رہی ہوں
معلوم نہیں کتنا ہے یہ شام کا رستہ
میں کیا کروں بابا میں کیا کروں بابا

ہے سامنے موجود میرے لاشے سکینہ
ہے مرحلہ درپیش سکینہ کی لحد کا
زندوں میں میت ہے نہیں کوئی سہارا
بیمار بھی اس وقت زنجیر میں جکڑا
میں کیا کروں بابا میں کیا کروں بابا

بابا کے بنائ چین نہیں پاتی ہے بچی
غم لحد سے گذرتا ہے تو چلاتی ہے بچی
لگتے ہے طمانچے تو لرز جاتی ہے بچی
حسرت سے مجھے دیکھنے لگتی ہے سکینہ
میں کیا کروں بابا میں کیا کروں بابا

بے گورو کفن ریت پہ ہے میرا برادر
ہاتھوں میں رسن ہے میرے سر پہ نہیں چادر
جب پھینکتا ہے ہم پہ کوئی دور سے پتھر
میں دیکھتی ہوں عابد بیمار کا چہرہ
میں کیا کروں بابا میں کیا کروں بابا

بابا کہیں بیکار نہ جائے میری محنت
بہنیں میری سر ننگے نہ ہو جائے مصیبت
اے کاش سمجھ جائے یہ پردے کی ضرورت
جاری ہے قمر آج بھی زینب کا یہ نوحہ
میں کیا کروں بابا میں کیا کروں بابا


zainab ne kaha roke musibat ka hai lamha
mai kya karoo baba, mai kya karoo baba

maa dhoondti hai qasime muztar nahi milta
dhoonda hai bahot aankhon ne akbar nahi milta
aaghosh hai khaali ali asghar nahi milta
doo kaise musibat may har ek maa ko dilaasa
mai kya karoo baba....

abbas gaye jab se sahara nahi koi
naize ki ani se meri chadar gayi cheeni
mai kya karoo mai chadare dilwa nahi sakti
har maa yehi kehti hai ke haye mera parda
mai kya karoo baba....

naizo pe hai sar khoon may tar dekh rahi hoo
bewaon yatemon ka safar dekh rahi hoo
dekha nahi jaata hai magar dekh rahi hoo
maloom nahi kitna hai ye shaam ka rasta
mai kya karoo baba....

hai saamne maujood mere laashe sakina
hai marhala dar pesh sakina ki lehad ka
zindan may mayyat hai nahi koi sahara
bemaar bhi is waqt zanjeer may jakda
mai kya karoo baba....

baba ke bina chain nahi paati hai bachi
gham hadh se guzarta hai to chillati hai bachi
lagte hai tamachay to laraz jati hai bachi
hasrat se mujhe dekhne lagti hai sakina
mai kya karoo baba....

be-goro kafan rayt pe hai mera baradar
hathon may rasan hai mere sar par nahi chadar
jab phaykta hai humpe koi door se pathar
mai dekhti hoo abid e bemaar ka chehra
mai kya karoo baba....

baba kahin bekaar na jaye meri mehnat
behne meri sar nange na ho haye musibat
ay kaash samajh jaye ye parde ki zaroorat
jari hai qamar aaj bhi zainab ka ye noha
mai kya karoo baba....
Noha - Mai Kya Karoo Baba
Shayar: Qamar Hasnain
Nohaqan: Riaz Ali
Download mp3
Listen Online