جب قید سے آزاد ہوئی آلِ پیعمبر
اور کرب و بلا آ گئے سب وارث و یاور
تب بیبیاں رونے لگیں قبروں سے لپٹ کر
عابد سی یہ فرمانے لگی زینب ِ مضطر
اے لال وطن چلنے پہ مجبور نہ کرنا
ماں جائے کی تربت سے مجھے دور نہ کرنا
مدینے میں نہ جائوں گی

حسین ابنِ علی کی قبر پہ آنسو بہائوں گی
مدینے میں نہ جائوں گی

اکیلا چھوڑ دوں کیسے میں زہرا کی کمائی کو
ابھی روئی نہیں دل کھول کے میں اپنے بھائی کو
یہاں فرشِ عزا شبیر کا میں تو بچھائوں گی
مدینے میں نہ جائوں گی ۔۔۔۔۔

کوئی پوچھے گا قاسم کو کوئی پوچھے گا اکبر کو
کوئی عباس کو پوچھے گا کوئی آ کے سرور کو
ہوا برباد سارا گھر میں کس کس کو بتائوں گی
مدینے میں نہ جائوں گی ۔۔۔۔۔

یہاں آئی تو اٹھارہ برادر ساتھ لائی تھی
چلی تھی جب مدینے سے بھرا گھر ساتھ لائی تھی
وہان جا کر نظر صغریٰ سے میں کیسے ملائوں گی
مدینے میں نہ جائوں گی ۔۔۔۔۔

مدینے شوق سے جاتی علی اکبر اگر ہوتے
پسر ہوتے نہ ہوتے بھائی میرے ہمسفر ہوتے
جو ملنے بیبیاں آئیں گی میں تو مر ہی جائوں گی
مدینے میں نہ جائوں گی ۔۔۔۔۔

کیا ہے قتل اعدا نے محمد کے نواسے کو
سکوں مل جائے گا اس امر سے دو دن کے پیاسے کو
حسین ابنِ علی کے نام پر پانی پلائوں گی
مدینے میں نہ جائوں گی ۔۔۔۔۔

یہاں پر آن کر اب انبیائ آنسو بہائیں گے
حسن زہرا محمد حیدرِ کرار آئیں گے
حسین ابنِ علی کا مرثیہ سب کو سُنائوں گی
مدینے میں نہ جائوں گی ۔۔۔۔۔

میرے بھائی کی تربت سُونا جنگل اور ویرانا
اندھیرا بن یہ تنہائی یہ چاروں سمت سناٹا
یہاں رہ کر غمِ شبیر کی بستی بسائوں گی
مدینے میں نہ جائوں گی ۔۔۔۔۔

بیٹھایا کیسے انور ناقے پہ سرور کی خواہر کو
سُناتی تھی سُخن یہی مگر سجادِ مضطر کو
چراغِ قبر آنکھوں سے میں رو رو کر جلائوں گی
مدینے میں نہ جائوں گی ۔۔۔۔۔


jab qaid se azad hui aal e payambar
aur karbobala aagaye sab waaris o yawar
tab bibiyan rone lagi qabron se lipat kar
abid se ye farmani lagi zainab e muztar
ay laal watan chalne pe majboor na karna
maajaye ki turbat se mujhe door na karna
madine mai na jaungi

hussain ibne ali ki qabr pe aansoo bahaungi
madine mai na jaungi

akela chor doo kaise mai zehra ki kamayi ko
abhi royi nahi dil khol ke mai apne bhai ko
yahan farshe aza shabbir ka mai to bichaungi
madine mai na jaungi...

koi poochega qasim ko koi poochega akbar ko
koi abbas ko poochega koi aake sarwar ko
hua barbaad saara ghar mai kis kis ko bataungi
madine mai na jaungi...

yahan aayi to athara baradar saath laayi thi
chali thi jab madine se bhara ghar saath laayi thi
wahan jaakar nazar sughra se mai kaise milaungi
madine mai na jaungi...

madine shauq se jaati ali akbar agar hotay
pisar hotay na hotay bhai mere humsafar hotay
jo milne bibiyan aayengi mai to mar hi jaungi
madine mai na jaungi...

kiya hai qatl aada ne mohamed ke nawase ko
sukoon miljayega is amr se do din ke pyase ko
hussain ibne ali ke naam par pani pilaungi
madine mai na jaungi...

yahan par aan kar ab ambiya aansoo bahayenge
hassan zehra mohamed hyder e karrar aayenge
hussain ibne ali ka marsiya sab ko sunaungi
madine mai na jaungi...

mere bhai ki turbat soona jangal aur veerana
andhera ban ye tanhai ye charon samt sannata
yahan rehkar ghame shabbir ki basti basaungi
madine mai na jaungi...

bithaya kaise anwar naaqe pa sarwar ki khwahar ko
sunaati thi sukhan yehi magar sajjad e muztar ko
charaghe qabr ashkon se mai ro ro kar jalaungi
madine mai na jaungi...
Noha - Madine Mai Na Jaungi
Shayar: Anwar Zahir, Anwar Meeruti
Nohaqan: Shareef Hussain(Lillay)
Download Mp3
Listen Online