پہنچے سرہانے بھائی کے جب شاہِ کربلا
غازی نے اپنی آخری سانسوں میں دی صدا
مولا ماں ام البنین سے مت کہنا

شرمندہ سکینہ سے ہوں بہت
میں پانی لیکر آنہ سکا
مولا ماں ام البنین۔۔۔۔

ماں نے جو سکھائے بچپن میں
وہ یاد ہیں سب اداب مجھے
نزدیک کھڑے رہنا اُس جا
شبیر جہاںبیٹھے جاکے
اِس وقت مگر خادم تیرا
تعظیم کوتیری اُٹھ نہ سکا
مولا ماں ام البنین۔۔۔۔

ہر لاش پہ گر کے کہتے تھے
کیا تم ہی علی کے بیٹے ہو
معلوم ہے کتنی مشکل میں
خیموں سے یہاں تک پہنچے ہو
عباس سے ملنے کی خاطر
زحمت جو اُٹھائی ہے مولا
مولا ماں ام البنین۔۔۔۔

کس طرح کٹے بازو میرے
مقتل میں بتادینا بے شک
میںزیں سے زمیں پر کیسے گرا
اماں کو سنا دینا بے شک
عباس کے گرنے سے لیکن
زینب کے گری تھی سر سے ردا
مولا ماں ام البنین۔۔۔۔

تھا چاروں جانب بکھرا ہوا
قرآن حسن کا جنگل میں
پامال بدن قاسم کا ہوا
گزری وہ قیامت مقتل میں
عباس کی زوجہ سے پہلے
افسو س ہوئی بیوا کبریٰ
مولا ماں ام البنین۔۔۔۔

بابا سے کیا بچوں کو جدا
کیا ظلم یہ ڈھایالوگوں نے
مسلم کی لاش کو فے کی
گلیوںمیںپھرایا لوگوں نے
عباس کی نظروں کے آگے
اُجڑی تھی رُقیہ کی دنیا
مولا ماں ام البنین۔۔۔۔

یہ سوچ کے رن میں روتی ہے
بازو سے لپٹ کر میری وفا
یہ بات گراں گزرے گی بہت
اماں کی طبیعت پر آقا
گر ہاتھ ہوئے پانی سے میرے
اور آپ کا اصغر پیاسا رہا
مولا ماں ام البنین۔۔۔۔

دو بھائی بچھڑتے تھے رن میں
کیسا تھا قیامت کا منظر
عباس مجھے بھائی کہہ دو
سرور نے کہا جب یہ رو کر
شبیر کو بھائی کہہ تو دیا
لیکن تھی تکلم لب پہ صدا
مولا ماں ام البنین۔۔۔۔


pahunchay sirhane bhai ke jab shahe karbala
ghazi ne apni aakhri saanson may di sada
maula maa ummul baneen se mat kehna

sharminda sakina se hoo bahot
mai pani lekar aa na saka
maula maa ummul baneen....

maa ne jo sikhaye bachpan may
wo yaad hai sab aadaab mujhe
nazdeek khade rehna us ja
shabbir jahan baithe jaake
is waqt magar khadim tera
taazeem ko teri uth na saka
maula maa ummul baneen....

har laash pe girke kehte thay
kya tum hi ali ke bete ho
maloom hai kitni mushkil may
khaimo se yahan tak pahunchay ho
abbas se milne ki khaatir
zehmat jo uthayi hai maula
maula maa ummul baneen....

kis tarha katay baazu mere
maqtal may bata dena beshak
mai zee se zameen par kaise gira
amma ko suna dena beshak
abbas ke girne se lekin
zainab ke giri thi sar se rida
maula maa ummul baneen....

tha charon jaanib bikhra hua
quran hassan ka jangal may
pamaal badan qasim ka hua
guzri wo qayamat maqtal may
abbas ki zauja se pehle
afsos hui bewa kubra
maula maa ummul baneen....

baba se kiya bachon ko juda
kya zulm ye dhaya logon ne
muslim ki laash ko koofe ki
galiyon may phiraya logon ne
abbas ki nazron ke aagay
ujdi thi ruqayya ki dunya
maula maa ummul baneen....

ye soch ke ran may roti hai
baazu se lipat kar meri wafa
ye baat garan guzregi bahot
amma ki tabiyat par aaqa
gar haath hue pani se mere
aur aap ka asghar pyasa raha
maula maa ummul baneen....

do bhai bichadte thay ran may
kaisa tha qayamat ka manzar
abbas mujhe bhai kehdo
sarwar ne kaha jab ye rokar
shabbir ko bhai keh to diya
lekin thi takallum lab pe sada
maula maa ummul baneen....
Noha - Maa Ummul Baneen
Shayar: Mir Takallum
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online