نیزے سے اصغر کو نظر آئی جو مادر
دیکھا کھُلا سر ہے پریشان ہے مضطر
رونے لگے کہنے لگے تب علی اصغر
ماں مجھے اپنے سینے سے لگا لے
ماں مجھے اپنی گودی میں چھُپا لے
ماں میں نیزے پہ ہوں

اماں بہت دن ہوئے جھُولے میں نہ سویا
ماں تیری عزت کی قسم پھر بھی نہ رویا
اب تجھے دیکھا تو میرے لب ہوئے گویا
آج بندھے ہاتھوں کو جھُولا سا بنا لے
سینے سے لگا لے،ماں میں نیزے پہ ہوں
ماں مجھے اپنے سینے سے لگا لے ۔۔۔

جسم کہاں سر ہے کہاں ہائے مقدر
اماں بدن رِہ گیا کربل کی زمیں پر
اماں تیرے ساتھ چلا آیا میرا سر
کرتا تجھے کیسے لعینوں کے حوالے
سینے سے لگا لے،ماں میں نیزے پہ ہوں
ماں مجھے اپنے سینے سے لگا لے ۔۔۔

گرم ہوا گرم زمین جلتا ہوا تیر
اماں ذرا سوچو میرے قد سے بڑا تیر
کیسے کہوں حلق پہ جس وقت لگا تیر
ہو گئے بے حوش مجھے دیکھنے والے
سینے سے لگا لے،ماں میں نیزے پہ ہوں
ماں مجھے اپنے سینے سے لگا لے ۔۔۔

کب سے سکینہ نے نہیں مجھ کو کیا پیار
کرب و بلا کوفہ کہاں شام کا بازار
ڈرتی ہے کیا خوں سے بھرے دیکھ کے رُخسار
نیزے کے نزدیک ذرا اُس کو بلا لے
سینے سے لگا لے،ماں میں نیزے پہ ہوں
ماں مجھے اپنے سینے سے لگا لے ۔۔۔

دھوپ میں توں نے نہ کبھی گھر سے نکا لا
اماں بڑے پیار سے توں نے مجھے پالا
آج نہیں کوئی مجھے دیکھنے والا
توں ہی مجھے دھوپ کی شدت سے بچا لے
سینے سے لگا لے،ماں میں نیزے پہ ہوں
ماں مجھے اپنے سینے سے لگا لے ۔۔۔

دیکھ تیرا لختِ جگر یوں تو ہے اصغر
نیزہ سواری میں ہے اکبر کے برابر
نوکِ سناں پر ہے ستارا سا میرا گھر
میری شجاعت پہ گلے مجھ کو لگا لے
سینے سے لگا لے،ماں میں نیزے پہ ہوں
ماں مجھے اپنے سینے سے لگا لے ۔۔۔

بابا کا سر بھائی کا سر نوکِ سناں پر
کیسے میں برداشت کروں اماں یہ منظر
جلتی ہوئی خاک سے منہ اپنا چھپا لے
سینے سے لگا لے،ماں میں نیزے پہ ہوں
ماں مجھے اپنے سینے سے لگا لے ۔۔۔

ٹکڑے کلیجہ ہوا بانو کا ہر اک آن
نیزے پہ گویا ہوا جب چھوٹا سا قرآن
ماں کی یہ آواز تھی بس سرور و ریحان
ساتھ ہوں آزاد تو ارمان یہ نکلے
سینے سے لگا لے،ماں میں نیزے پہ ہوں
ماں مجھے اپنے سینے سے لگا لے ۔۔۔


naize se asghar ko nazar aayi jo maadar
dekha khula sar hai pareshan hai muztar
rone lage kehne lage tab ali asghar
maa mujhe apne seene se lagale
maa mujhe apni godi me chupale
maa mai naize pe hoo

amma bahut din huve jhoole may na soya
maa teri izzat ki kasam phir bhi na roya
ab tujhe dekha to mere lab huve goya
aaj bandhe haathon ko jhoola sa banale
seene se lagaale, maa me naize pe hoo
maa mujhe apne seene se lagale....

jism kahan sar hai kahan haaye mukaddar
amma badan rehgaya karbal ki zameen par
amma tere saath chala aaya mera sar
karta tujhe kaise layeeno ke hawale
seene se lagaale, maa me naize pe hoo
maa mujhe apne seene se lagale....

garm hawa garm zameen jalta huwa teer
amma zara socho mere khad se bada teer
kaise kahun halq pe jis waqt laga teer
hogaye behosh mujhe dekhne wale
seene se lagaale, maa me naize pe hoo
maa mujhe apne seene se lagale....

kabse sakina ne nahi mujhko kiya pyar
karbobala kufa kahan shaam ka bazaar
darti hai kya khoon se bhare dekh ke ruksaar
naize ke nazdeek zara usko bulaale
seene se lagaale, maa me naize pe hoo
maa mujhe apne seene se lagale....

dhoop may tune na kabhi ghar se nikaala
amma bade pyar se tune mujhe paala
aaj nahi koi mujhe dekhne waala
tuhi mujhe dhoop ki shiddat se bachaale
seene se lagaale, maa me naize pe hoo
maa mujhe apne seene se lagale....

dekh tera lakhte jigar yun to hai asghar
naiza sawaari may hai akbar ke barabar
noke sina par hai sitaara sa mera ghar
meri shuja-at pe gale mujhko lagaale.
seene se lagaale, maa me naize pe hoo
maa mujhe apne seene se lagale....

baba ka sar bhai ka sar noke sina par
aap ke sarpe nahi amma koi chaadar
kaise mai bardaash karoon amma ye manzar
jalti huvi khaak se moo apna chupaale
seene se lagaale, maa me naize pe hoo
maa mujhe apne seene se lagale....

tukhde kaleja hua bano ka har ek aan
naize pe goya hua jab chota sa quran
maa ki ye aawaz thi bas sarwar-o-rehaan
saath ho aazad to armaan ye nikaale
seene se lagaale, maa me naize pe hoo
maa mujhe apne seene se lagale....
Noha - Maa Mai Naize Pe Hoo
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online