جب علی اکبر سا بیٹا ، شاہ کو رب نے دیا
اس عطائِ کبریا پر کربلا نے دی صدا
ماں اور علی اکبر کی ماں

اُس کا ماتھا چومتی تھی اُمِ لیلیٰ بار بار
اُس کا چہرہ دیکھ کر کہتی تھی اے پروردگار
یہ بہارِ زندگی ہے ، یہ میرے گھر کی بہار
یہ میری پہلی تمنا ، یہ میرے دل کا قرار
ماں اور علی اکبر کی ماں

کالی ڈوری باندھتی ننھی کلائی میں کبھی
ننھے سینے پر کبھی کرتی تھی دم نادِ علی
کہتی تھی مُرجھا ئے نہ مولا میرے دل کی کلی
یہ دلِ شبیر ہے یہ ہے ہماری زندگی
ماں اور علی اکبر کی ماں

گھُٹنیوں چلنے لگا جس وقت اُن کا شیر خوار
صاف کرتی اپنے آنچل سے وہ اُس کی رہ گُزار
اے خُدا نہ خواستہ چبھ جائے نہ بچے کی کھال
چلتے چلتے جب وہ تھکتا پُشت پہ کرتی سوار
ماں اور علی اکبر کی ماں

سب قانونِ حرب سکھلاتے تھے عباسِ جری
صحن میں کرسی بچھا کر ماں بھی اکثر دیکھتی
مشق کے دوران اک دن یوں ہی نیزے کی اَنی
چھُو گئی سینے سے لیلیٰ پر غشی طاری ہوئی
ماں اور علی اکبر کی ماں

اک وہ دن تھا کہ جب برچھی ذرا سی چھُو گئی
اُمِ لیلیٰ کانپ اُٹھی اور غشی طاری ہوئی
اک یہ دن ہے میدانِ کربلا دیکھے کوئی
ہائے جگر کے پار نیزہ اور ماں ہے دیکھتی
ماں اور علی اکبر کی ماں

کیا خبر تھی اُمِ لیلیٰ کو وہ دن بھی آئے گا
بیاہ کا ارماں دل کا دل میں ہی رِہ جائے گا
لاشِ قاسم کی طرح ٹکڑوں میں دل بٹ جائے گا
نوجواں کی لاش پر سہرا سجایا جائے گا
ماں اور علی اکبر کی ماں

اُمِ لیلیٰ دل سنبھالو عرش سے آئی صدا
برچھیوں کی سمت جاتا ہے تمہارا مہلکا
یوں کرو رخصت کے جیسے ہو سماں بارات کا
خاک میں مِل جائے گی لیلیٰ شبیہہِ مصطفیٰ
ماں اور علی اکبر کی ماں

کس طرح ریحان ہو اُس گفتگو کا اب بیاں
عورتیں جب شام کی کہتی تھیں لے کر ہچکیاں
جس جواں کا نوکِ نیزہ پر ہوا ہے سر عیاں
اُس جواں سے پہلے یا رب مر گئی ہو اُس کی ماں
ماں اور علی اکبر کی ماں


jab ali akbar sa beta, shah ku rab nai diya
is aatay-e-kibriya par karbala nay di sada
maa aur ali akbar ki maa

us ka maatha chumti thi umme-laila baar baar
us ka chehra dekh kar kehti thi ay parwardigar
yeh bahaar-e-zindagi hai, yeh mere ghar ki baahar
yeh meri pehli tamanna, yeh mere dil ka qaraar
maa aur ali akbar ki maa

kaali dori baandhti nanhe kalaii may kabhi
nanhe sine par kabhi karti thi dam nad-e-ali
kehti thi murjaae-na maula mere dil ki kali
ye dil-e-shabbir hai yeh hai hamari zindagi
maa aur ali akbar ki maa

ghutniyon chal ne laga jis waqt unka sheer qaar
saaf karti apne aanchal se wo uski reh guzaar
ay khuda na khasta chub jaye na bachche kai khaal
chalte chalte jab woh thakta pusht pay karti sawar
maa aur ali akbar ki maa


sab kunu-e-harb sikhlate thay abbas-e-jari
sehn may kursi bicha kar maa bhi aksar dekhti
mashq kay douraan ek din youn hi naize ki ani
chu gayi sine sai layla par ghashi tari huwi
maa aur ali akbar ki maa

ek woh din tha kai jab barchi zara si chu gayi
umm-e-laila kamp uthi aur ghashi tari huwi
ek ye din hai maidan-e-karbala dekhe koi
hai jigar kay paar neza aur maa hai dekhti
maa aur ali akbar ki maa

kya khabar thi umm-e-laila ko woh din bhi aayega
byaah ka armaan dil ka dil may hi reh jaayega
laashe qasim ki tarha tukroon main dil bat jaayega
naujawan ki laash par sehra sajaaya jaaega
maa aur ali akbar ki maa

umm-e-laila dil sambhalo arsh say aayi sada
barchiyon ke simt jaata hai tumhara mehlaqa
youn karo ruqsat kay jaisay ho sama baraat ka
khaaq main mil jaayegi laila shabh-e-mustafa
maa aur ali akbar ki maa

kis tarah rehan ho us guftugu ka ab bayaan
aurtain jab sham ki kehti thi lekar hichkiyaan
jis jawaan ka nouk-e-neza par huwa hai sar ayaan
us jawaan say pehle ya rab margayi ho uski maa
maa aur ali akbar ki maa
Noha - Maa Aur Ali Akbar
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online