لوریاں دے کے جسے زنداں نے سُلایا ہو گا
سینہ بابا کا تجھے یاد تو آیا ہو گا

خاک کا آج بچھونا ہے نصیبوں میں تیرے
ہاںکبھی باپ نے سینے پہ سُلایا ہو گا
لوریاں دے کے جسے ۔۔۔

پیاس بابا کی تجھے یاد تو آئی ہو گی
پانی فضہ نے جو ہونٹوں سے لگایا ہو گا
لوریاں دے کے جسے ۔۔۔

شمر بھُولے گی بھلا کیسے تماچے تیرے
چین معصومہ نے مر کر بھی نہ پایا ہو گا
لوریاں دے کے جسے ۔۔۔

ہائے زنجیروں میں جکڑا تھا جنازہ تیرا
کیسے بیمار نے زنداں سے اُٹھایا ہو گا
لوریاں دے کے جسے ۔۔۔

جس نے بھی دل میں بسایا ہے تیرا غم بی بی
اُس کو جواد کے نوحے نے رُلایا ہو گا
لوریاں دے کے جسے ۔۔۔


loriya deke jise zindaan ne sulaaya hoga
seena baba ka tujhe yaad to aaya hoga

khaakh ka aaj bichona hai naseebo may tere
haa tabhi baap ne tujhe seene pe sulaaya hoga
loriya deke jise....

pyaas baba ki tujhe yaad to aayi hogi
pani fizza ne jo honton se lagaya hoga
loriya deke jise....

shimr bhoolegi bhala kaise tamache tere
chain masooma ne markar bhi na paaya hoga
loriya deke jise....

haaye zanjeero may jakda tha janaza tera
kaise bemaar ne zindaan se uthaaya hoga
loriya deke jise....

jisne bhi dil may basaya hai tera gham bibi
usko jawaad ke nowhe ne rulaaya hoga
loriya deke jise....
Noha - Loriya Deke Jise
Shayar: Jawaad
Nohaqan: Hasan Sadiq
Download Mp3
Listen Online