لپٹی سموں سے کرتی تھی معصوم یہ بکا
اے ذوالجناح رن میں نہ بابا کو لے کے جا

باقی نہ کوئی مونس و یاور وطن سے دور
ایسے میں کر نہ مجھ سے تو شاہ دیں کو تو جدا
لپٹی سموں سے کرتی تھی

ڈرتی ہوں جو گیا وہ نہیں آیا لوٹ کر
مقتل میں لے کے جا نہ انہیں عکس باوفا
لپٹی سموں سے کرتی تھی

آجائیں میرے عموں تو لے جانا شوق سے
روکو گی پھر نہ تجھ کو یہ اسرار ہے میرا
لپٹی سموں سے کرتی تھی

تھامی لگام شہہ نے کہا چل اے راہوار
لیکن قدم بڑھائے نہ ساتھ ہی کھڑا رہا
لپٹی سموں سے کرتی تھی

مولا سکینہ لپٹی ہے پائوں سے آن کر
دیکھیں تو آپ جھک کے ذرا بہر کبریا
لپٹی سموں سے کرتی تھی

اترے فرس سے کہتے ہوئے شاہ نامدار
بالی سکینہ جانے دو مجھ کو پائے خدا
لپٹی سموں سے کرتی تھی

بہلا رہے تھے مولا سکینہ کو اس طرح
نکلی ادھر خیام سے زینب برہنہ پا
لپٹی سموں سے کرتی تھی


lipti sumon se karti thi masoom ye buka
ay zuljana ran may na baba ko leke ja

baaqi na koi muniso yawar watan se door
aise may kar na mujse tu shahedeen ko tu juda
lipti sumon se....

darti hoo jo gaya wo nahi aaya laut kar
maqtal may leke jaa na inhe akse bawafa
lipti sumon se....

aajaye mere ammu to lejana shauk se
rokungi phir na tujh ko ye israr hai mera
lipti sumon se....

thami ligaam sheh na kaha chal ay raahwar
lekin khadam badaye na saathi khada raha
lipti sumon se....

maula sakina lipti hai paon se aan kar
dekhe to aap jhuk ke zara behre kibriya
lipti sumon se....

utre faras se kehte hue shahe naamdar
bali sakina jaane do mujko paye khuda
lipti sumon se....

behla rahe thay maula sakina ko is tarha
nikli udhar qayam se zainab barehna pa
lipti sumon se....
Noha - Lipti Sumon Se

Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online