جب مدینے سے چلا قافلہ کربوبلا
تھا یہ صغر اکے لبوں پر نوحہ
لے چلو بابا مجھے لے چلو بابا
اپنے ہمراہ سوئے کربوبلا
لے چلو بابا۔۔۔۔

ٓٓٓٓٓٓٓٓٓآپکی یاد میں رو رو کے میں مر جائوں گی
با با اکبر کی قسم چین نہیں پائوں گی
میری سانسوںکابروسہ نا رہا
لے چلو بابا۔۔۔۔

قافلے والوں کو پانی بھی پلائوں گی میں
اپنی آغوش میں اصغر کو سلائوں گی میں
با با یہ آپ سے وعدہ ہے میرا
لے چلو بابا۔۔۔۔

میرے کانوں میں جو آوازِ اذاں آئے گی
میرے اکبر کی مجھے یاد بہت آئے گی
بھائی کی یاد نہ بن جائے قضائ
لے چلو بابا۔۔۔۔

کیسے اکبر کے بِنا عید گزاروں گی میں
کبھی تم کو کبھی عمّوں کو پُکاروں گی میں
جب کوئی پاس نہ ہو گا بابا
لے چلو بابا ۔۔۔۔۔

دھوپ اور گرم ہوا ہو گی سفر میں دیکھو
اپنے آنچل میں چھُپا لوں گی علی اصغر کو
یوں نہ اصغر کو کرو مجھ سے جُدا
لے چلو بابا ۔۔۔۔۔

خواب اکبر کی عروسی کے بہت دیکھے تھے
خاک ہو جائیں گے اے بابا سب ارماں میرے
دل یہی سوچ کے روتا ہے میرا
لے چلو بابا ۔۔۔۔۔

چچا عباس اور سکینہ پھُوپھی زینب سے
آخری بار ملا دو مجھے بابا سب سے
پھر یہ بیمار نہیں دے گی صدا
لے چلو بابا ۔۔۔۔۔

بھّیا عابد کو روز دوا پلائوں گی میں
اُن کی راہوں میں نگاہوں کو بچھائوں گی میں
تم کنیزوں کی طرح بحرِ خدا
لے چلو بابا ۔۔۔۔۔

اچھا مہمل میں مجھے تم نہ بیٹھانا بابا
تم مجھے راہ میں پیدل ہی چلانا بابا
نہ کروں گی میں شکایت نہ گِلا
لے چلو بابا ۔۔۔۔۔

میں نے مانا کے نہیں کام میرا منظر میں
بابا اتنا تو بتا دو کے اکیلے گھر میں
زندہ رہ پائے گی صغریٰ تنہا
لے چلو بابا ۔۔۔۔۔

جب کبھی ہو کے ہوا مدینے سے آتی ہے
آج بھی مظہر و عرفان یہ صدا آتی ہے
اپنے ہمراہ سُوئے کر ب و بلا
لے چلو بابا ۔۔۔۔۔


jab madine se chala khaafla karbobala
tha ye sughra ke labon par nawha
le chalo baba mujhe le chalo baba
apne humraah suye karbobala
le chalo baba....

aapki yaad may ro ro ke mai marjaungi
baba akbar ki qasam chain nahi paaungi
meri sason ka bharosa na raha
le chalo baba….

khafile walon ko pani bhi pilaungi mai
apni aaghosh may asghar ko sulaungi mai
baba ye aapse wada hai mera
le chalo baba….

mere kano may jo awaaz e azan aayegi
mere akbar ki mujhe yaad bahot aayegi
bhai ki yaad na ban jaye qaza
le chalo baba….

kaise akbar ke bina eid guzarungi mai
kabhi tumko kabhi ammu ko pukarungi mai
jab koi paas na hoga baba
le chalo baba….

dhoop aur garm hawa hogi safar may dekho
apne aanchal may chupalungi ali asghar ko
yu na asghar ko karo mujhse juda
le chalo baba….

khwab akbar ki urusi ke bahot dekhe thay
khaak hojayenge ay baba sab armaan mere
dil yehi soch ke rota hai mera
le chalo baba….

chacha abbas aur sakina phuphi zainab se
aakhri baar mila do mujhe baba sabse
phir ye bemaar nahi degi sada
le chalo baba….

bhaiya abid ko dawa roz pilaungi mai
unki rahon may nigahon ko bichaungi mai
tum kanizo ki tarha behr e khuda
le chalo baba….

acha mehmil may mujhe tum na bithana baba
tum mujhe raah may paidal hi chalana baba
na karungi mai shikayat na gila
le chalo baba….

maine maana ke nahi kaam mera manzar may
baba itna to batado ke akele ghar may
zinda rehpayegi sughra tanha
le chalo baba….

jab kabhi hoke madine se hawa aati hai
aaj bhi mazhar o irfan ye sada aaati hai
apne humraah suye karbobala
le chalo baba….
Noha - Le Chalo Baba
Shayar: Mazhar Abidi
Nohaqan: Irfan Haider
Download Mp3
Listen Online