شاہِ مرداں شیرِ یزداں قوتِ پروردگار
لا فتاح اِللہ علِی اللہ سیف اللہ ذوالفقار

اس طرح چلتی تھی رَن میں تیغِ شیرِ کِردگار
ہر طرف سے اشقیائ میں الاماں کی تھی پُکار
کر چُکا جب ڈھیر مرحب کو شاہِ دُلدُل سوار
آ رہی تھی یہ صدا دیوار و در سے بار بار
شاہِ مرداں ۔۔۔۔۔
لافتاح اِللہ علی ۔۔۔۔۔

جس طرح کوئی رسولِ پاک سے بڑھ کر نہیں
جس طرح کوئی رسول اللہ کا ہمسر نہیں
ایک ہے دُنیا میں حیدر دوسرا حیدر نہیں
مِثلِ حیدر یہ کسی کی تیغ میں جوہر نہیں
ایک طرف ساری عبادت ایک طرف حیدر کا وار
لا فتاح اِللہ علی ۔۔۔۔۔

جُز علی کا کون حق کے واسطے سینہ سِپر
کون اُٹھتا تھا رسول اللہ کی آواز پر
کس نے قُرباں کر دیا راہِ خُدا میں اپنا گھر
اس حقیقت سے بھلا ہم کس طرح پھیریں نظر
ہے اسی آواز پر تکبیر کا دارومدار
لا فتاح اِللہ علی ۔۔۔۔۔

یاد کر لو دور کیوں جاتے ہو کل کی بات ہے
جنگ کے میدان میں کام آیا وہ کس کی ذات ہے
مہوِ حیرت مُتقل لشکر پہ کائنات ہے
حق و نُصرت آج بھی نامِ علی کے ساتھ ہے
گونجتا ہے حیدری نعروں سے دشتِ کار زار
لا فتاح اِللہ علی ۔۔۔۔۔

کام آیا پھر وہی جب وقت آیا امتحان
نام سے جس کے لرزتے ہیں زمین و آسمان
لاکھ جلتا ہو علی کے کارناموں سے جہاں
سب سے افضل آج ہے دنیا میں حیدر کا نِشان
آج بھی سجتی ہے سینوں پہ اِک یہی یادگار
لا فتاح اِللہ علی ۔۔۔۔۔

کہتے تھے مُحمد مادرِ غم خوار سے
اس طرح رَن میں لڑیں گے لشکرِ کُفار سے
سب ہمیں تشبیہہ دیں گے جعفرِ طیار سے
بچ کے جا پائے گا کوئی کیا ہمارے وار سے
کھینچ دیں گے تیغ سے ہم بڑھ کہ نقش و نگار
لا فتاح اِللہ علی ۔۔۔۔۔

کیا کوئی روکے گا ہم کو ماتمِ شبیر سے
باندھ دے کوئی ہمیں گر آہنی زنجیر سے
مستقل ہو جائے گردن بھی اگر شمشیر سے
کیوں نہ ہو محشر عقیدت شاہِ خیبر گیر سے
یا علی کہہ دیں گے جب رُک جائے گی خنجر کی دھار
لا فتاح اِللہ علی ۔۔۔۔۔


shahe mardan shere yazdan quwwate parwardigar
la fata illah ali la saif illa zulfaqar

is tarha chalti thi ran may tayghe shere kirdagaar
har taraf se ashkiyan may al-amaan ki thi pukar
kar chuka jab dhayr marhab ko shahe duldul sawar
aa rahi thi ye sada dewaar o dar se baar baar
shahe mardan....
la fata illah ali....

jis tarha koi khuda e paak se bad kar nahi
jis tarha koi rasool allah ka hamsar nahi
ek hai dunya may hyder doosra hyder nahi
misle hyder ye kisi ki taygh may jauhar nahi
ek taraf saari ibadat ek taraf hyder ka waar
la fata illah ali....

juz ali ka kaun haq ke waaste sina sipar
kaun uth-ta tha rasool allah ki awaaz par
kisne qurban kardiya raahe khuda may apna ghar
is haqeeqat se bhala hum kis tarha phayre nazar
hai isi awaaz par takbeer ka daar o madaar
la fata illah ali....

yaad karlo door kyun jaate ho kal ki baat hai
jang ke maidan may kaam aaya wo kiski zaat hai
mehre hairat muttaqil lashkar pe kaayanat hai
haq o nusrat aaj bhi name ali ke saath hai
goonjta hai hyderi naaro se dashte kaarzaar
la fata illah ali....

kaam aaya phir wohi jab waqt aaya imtihan
naam se jiske larazte hai zameen o aasman
laakh jalta ho ali ke kaarnamo se jahan
sabse afzal aaj hai dunya may hyder ka nishan
aaj bhi sajti hai seeno pe ek yehi yaadgaar
la fata illah ali....

kehte thay mohamed maadare ghamkhar se
is tarha ran may ladenge lashkare kuffar se
sab hame tashbeeh denge jaffar e tayyar se
bach ke jaa payega koi kya hamare waar se
khaynch denge taygh se hum badr ke naksh o nigaar
la fata illah ali....

kya koi rokega humko matame shabbir se
baandh-de koi hame gar aahni zanjeer se
mustaqil hojaye gardan bhi agar shamsheer se
kyun na ho mehshar aqeedat shahe khyber geer se
ya ali kehdenge jab ruk jayegi khanjar ki dhaar
la fata illah ali....
Noha - La Fata Illah Ali

Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online