کیا ستم تھا کربلا میں
درد و غم تھا کر بلا میں
ہائے زہرا کے پالے پہ شمرِ لعیں کا قدم تھاکربلا میں
کیا ستم تھا کربلا ۔۔۔۔۔

شاہ جلتی ریت پر تھے
نہ بھتیجے نہ پسر تھے
کون آتا مدد کو شہیدوں کا سر سب قلم تھاکربلا میں
کیا ستم تھا کربلا ۔۔۔۔۔

چاروں طرف کو دیکھتے تھے
پانی پانی مانگتے تھے
دھوپ شدت کی تھی
پیاس سے شِہ کا ہونٹوں پہ دم تھاکربلا میں
کیا ستم تھا کربلا ۔۔۔۔۔

بچہ ہاتھوں پر اُٹھا کر
مانگتے تھے پانی سرور
ہائے وہ چھ مہینے کے بچے کا ہونٹوں پہ دم تھاکربلا میں
کیا ستم تھا کربلا ۔۔۔۔۔

حرملا جب تیر مارا
خون اُگل کر وہ سدھارا
اپنے بابا کے گردن پہ گردن کیئے اپنی خم تھاکربلا میں
کیا ستم تھا کربلا ۔۔۔۔۔

ڈھل گئی وہ پیاری گردن
گر پڑے وہ دونوں جوشن
خون سے چھوٹا کُرتا وہ ننھا سا نم تھاکربلا میں
کیا ستم تھا کربلا ۔۔۔۔۔

نکلی زینب خاک اُڑاتی
پیتی تھی اپنی چھٹی
دیکھتی کیا ہے نیزے پہ سر شاہِ دین کا علم تھاکربلا میں
کیا ستم تھا کربلا ۔۔۔۔۔

سب چرندے رو رہے تھے
سب پرندے رو رہے تھے
دیکھ حال شاہِ کربلا کی ہر اک چشم نم تھاکربلا میں
کیا ستم تھا کربلا ۔۔۔۔۔

اے بہادر ظلم شاہ پر
جو جو گزرے اُنکے اوپر
آج تک ایسا دیکھا سُنا ہی نہیں جو ستم تھاکربلا میں
کیا ستم تھا کربلا ۔۔۔۔۔


kya sitam tha karbala may
dard o gham tha karbala may
haye zehra pe paale pe shimr e layeen ka khadam tha karbala may
kya sitam tha karbala....

shah jalti reth par thay
na bhatije na pisar thay
kaun aata madad ko shaheedo ka sar sab qalam tha karbala may
kya sitam tha karbala....

chau taraf ko dekhte thay
pani pani maangte thay
dhoop shiddat ki thi
pyas se sheh ka honton pe dam tha karbala may
kya sitam tha karbala....

bacha hathon par uthakar
maangte thay pani sarwar
haye wo cheh mahine ke bache ka honton pe dam tha karbala may
kya sitam tha karbala....

hurmula jab teer maara
khoon ugalkar wo sidhaara
apne baba ke gardan pa gardan kiye apni kham tha karbala may
kya sitam tha karbala....

dhal gayi wo pyari gardan
gir paday wo dono jaushan
khoon se chota kurta wo nanha sa nam tha karbala may
kya sitam tha karbala....

nikli zainab khaak udaati
pee ti thi apni chati
dekhti kya hai naize pa sar shahe deen ka alam tha karbala may
kya sitam tha karbala....

sab charinde ro rahe thay
sab parinde ro rahe thay
dekh haal shahe karbala ki har ek chashm nam tha karbala may
kya sitam tha karbala....

ay bahadur zulm shah par
jo jo guzre unke upar
aaj tak aisa dekha suna hi nahi jo sitam tha karbala may
kya sitam tha karbala....
Noha - Kya Sitam Tha Karbala
Shayar: Bahadur
Nohaqan: Mir Raza Ali (Maulana)
Download Mp3
Listen Online