شامِ غم آگئی، شامِ غم آگئی
کیا رہا خیموں میںشہہ کے اک اُداسی رِہ گئی
صرف رونے کو محمد کی نواسی رِہ گئی

سج گئی قا سم کے ٹکڑوں سے اُدھر کرب و بلا
ماں اِدھر بیٹے کی دُلہن کو سجاتی رِہ گئی
کیا رہا خیموں ۔۔۔

چھینتا تھا شمر چادر اور زینب بار بار
اپنی چادر کے محافظ کو بلاتی رِہ گئی
کیا رہا خیموں ۔۔۔

خونِ دل اکبر کا سب بہہ گیا رن میں مگر
دل میں بس اک بات زینب کی ردا کی رِہ گئی
کیا رہا خیموں ۔۔۔

اے مسلمانوں تمہاری غیرتیں کیا ہو گئیں
تم تماشائی تھے زینب منہ چھپاتی رِہ گئی
کیا رہا خیموں ۔۔۔

قید میں بالی سکینہ کو ملا بابا کا سر
منہ پہ منہ رکھ کر جو سوئی ماں جگاتی رِہ گئی
کیا رہا خیموں ۔۔۔

مادرِ اصغر نہ بیٹھی سائے میں اصغر کے بعد
سائے میں آئی تو زندہ لاش باقی رِہ گئی
کیا رہا خیموں ۔۔۔

ہر تماچے پر سکینہ منہ پہ رکھ کر ننھے ہاتھ
نیل رُخساروں کے غازی کو دِکھاتی رِہ گئی
کیا رہا خیموں ۔۔۔

آ گئے ریحان و  سرور کربلا سے لوٹ کر
آج تک خوشبو بدن میں کربلا کی رِہ گئی
کیا رہا خیموں ۔۔۔


shaam-e-gham aagayi, shaam-e-gham aagayi
kya raha qaimo may sheh kay, ek udaasi rehgayi
sirf ronay lo mohammad ki nawasi rehgayi

saj gayi qasim kay tukdo se udhar karbobala
maa idhar betay ki dulhan ko sajati rehgayi
kya raha qaimo...

cheen ta tha shimr chaadar aur zainab baar baar
apnay chaadar ke muhafiz ko bulaati rehgayi
kya raha qaimo...

khoon-e-dil akbar ka sad behgaya ran may magar
dil may bas ek baat zainab kay rida ki rehgayi
kya raha qaimo...

ay muslamaano tumhari ghiratay kya hogayi
tum tamashaai thay zainab moo chupaati rehgayi
kya raha qaimo...

qaid may baali sakina ko mila baba ka sar
moo pe moo rakhkar jo soi maa jagaati rehgayi
kya raha qaimo...

maadaray asghar na baithi saaye may asghar kay baad
saaye may aayi to zinda laash baaqi rehgayi
kya raha qaimo...

har tamachay par sakina moo pe rakhkar nanhay haath
neel ruksaaro ky ghazi ko dikhati rehgayi
kya raha qaimo...

aagaye rehan-o-sarwar karbala se laut kar
aaj tak khushboo badan may karbala ki rehgayi
kya raha qaimo...
Noha - Kya Raha Qaimo May
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online